ہم شیوسینا ونچت اگھاڑی کے اتحاد کے خلاف نہیں: این سی پی

8

ممبئی:ہم شیوسینا اور ونچت اگھاڑی کے اتحاد کے خلاف نہیں ہیں۔ ہماری خواہش ہے کہ کوئی ہماری اگھاڑی کے ساتھ بات چیت کرکے عین موقع پر کنارہ کش نہ ہوجائے، اس بات کا اگھاڑی کی تمام پارٹیوں کو خیال رکھنا چاہئے اور ایسے امکان سے ہوشیاربھی رہنا چاہئے رکھنا چاہئے۔یہ باتیں این سی پی کے ریاستی صدراورسابق آبی وسائل کے وزیرجینت پاٹل نے آج پارٹی آفس میں میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے کہیں۔

جینت پاٹل نے یہ بھی کہا کہ کانگریس، این سی پی اور شیو سینا (ادھو ٹھاکرے گروپ) کسی سے بھی بات کریں اور نئے دوست بنائیں اس سے کسی کو کوئی اعتراض نہیں ہے۔لیکن دوست جوڑتے وقت اس بات کا خیال رکھنا چاہیے کہ وہ آخر تک دوستی نبھائے اورانتخابات کے دوران وہ ساتھ رہیں۔قصبہ وچنچوڑ کے بارے میں جینت پاٹل نے کہا کہ مہاوکاس اگھاڑی کی سبھی پارٹیاں اس معاملے میں ایک ساتھ بیٹھیں گی اور فیصلہ کریں گی۔ چونکہ چنچوڑ میں این سی پی کی طاقت زیادہ ہے، اس لیے بی جے پی اپنے کارکنان کواعتمادمیں لینے کے نام پر مطالبات، اعلانات اور قراردادوں کا پروگرام چلا رہی ہے۔بی جی پی چنچوڑ میں فی الحال اپوزیشن پر دباؤ ڈالنے کی کوشش کررہی ہے۔ لیکن اصل تفتیش تو پمپری چنچوڑ میونسپل کارپوریشن میں ہونے والی بدعنوانی کی ہونی چاہیے۔ جینت پاٹل نے یہ بھی کہا کہ اگر اس کی انکوائری کرائی جائے تو بی جے پی کی وہاں کتنی بدعنوانی ہے، یہ لوگوں کو معلوم ہوجائے گا۔جینت پاٹل نے یہ بھی بتایا کہ پارٹی سربراہ شرد پوار صاحب کی صدارت میں این سی پی کے سرکردہ لیڈروں کی میٹنگ ہوئی۔اس میٹنگ میں ریاست کے سنگین مسائل پر تبادلہ خیال کیا گیا۔