NCP Urdu News 31 March 22

0 5

سیاسی مخالفین کی آواز دبانے کے لئے مرکزی ایجنسیوں کا استعمال: مہیش تپاسے

مرکزی ایجنسیوں کی سچائی اجاگر کرنے پرنواب ملک کے خلاف کارروائی ہوئی ہے

کریٹ سومیا نے نرائن رانے کے خلاف ای ڈی کے پاس جو شکایت کی تھی اس کا کیا ہوا؟

پٹرول،ڈیژل وگیس کی قیمتیں آسمان پر،کہاں ہیں مودی جی کے اچھے دن؟

ممبئی:این سی پی کے ریاستی چیف ترجمان مہیش تپاسے نے آج مرکزی حکومت پر الزام لگایا کہ وہ سیاسی مخالفین کی آواز کو دبانے کے لیے مرکزی ایجنسیوں کا استعمال کر رہی ہے۔ مرکزی حکومت نے ای ڈی کے ذریعے 4700 معاملے درج کیے ہیں جن میں سے 313 لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے اور اب تک 1700 چھاپے مارے جا چکے ہیں۔ لیکن ای ڈی کے ان تمام معاملات میں سے صرف 9 معاملوں میں ملزمین قصوروار قرارپائے ہیں۔

ان سی پی کے دفتر میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے مہیش تپاسے نے ای ڈی کے ذریعے کی گئی کارروائیوں کے اعداد وشمار پیش کئے۔انہوں نے کہا کہ این سی پی نے این سی بی کے غلط کاموں کے خلاف آواز اٹھائی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مجرموں کو سزا صرف اسی صورت میں مل سکتی ہے جب مرکزی ایجنسیوں کی کارروائیو ں میں سیاسی مداخلت نہ ہو۔ لیکن آج کل بی جے پی متواتر الزامات لگا رہی ہے، اعداد و شمار دے رہی ہے، جائیدادوں کے بارے میں معلومات پیش کررہی ہے۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ یہ سب قبل ازوقت اطلاعات بی جے پی کے لیڈروں کے کہاں سے مل رہی ہے؟تپاسے نے کہا کہ اگر ملک کے پیسے کا کوئی غلط استعمال کررہا ہے تو اس کے خلاف کارروائی ہونی چاہئے لیکن محض اس لئے کارروائی ہونا کہ وہ حکومت کے خلاف آواز اٹھاتا ہے اور اس کی آواز کو دبانا چاہئے، کسی طور مناسب نہیں ہے۔ کریٹ سومیا نے ای ڈی میں شکایت درج کرائی تھی کہ مرکزی وزیر نارائن رانے نے غلط طریے سے پیسے جمع کیاہے۔ اس شکایت کا کیا ہوا؟ کیا نرائن رانے کو کلین چیٹ مل گئی ہے؟یہ باتیں لوگوں کے سامنے آنی چاہئیں۔

مہیش تپاسے نے میڈیا کے نمائندوں کے سوالوں کے جواب دیتے ہوئے کہا کہ کسی پر الزام عائد کرنے کے بعد ان الزامات کو ثابت کرنے کے لئے دستاویزات مقررہ مدت میں عدالت کے روبروپیش کرنے ہوتے ہیں، لیکن تفتیش کے نام پر ایجنسیاں وقت گزاری کررہی ہیں جو کسی طور مناسب نہیں ہے۔ این سی پی کے قومی ترجمان واقلیتی امور کے وزیر نواب ملک نے این سی بی کی دھاندلی کو بے نقاب کیا تھا جس میں مرکزی حکومت کو شرمندگی کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ اس لئے نواب ملک کی آواز کو دبانے کے لئے ای ڈی کے ذریعے کارروائی کی گئی ہے۔

تپاسے نے کہا کہ حالیہ اسمبلی انتخابات کے بعد دس بار پٹرول وڈیزل کی قیمتیں بڑھ چکی ہیں۔ اچھے دنوں کا خواب دکھا کر اقتدار میں آنے والی مودی حکومت نے گزشتہ چند دنوں میں ایندھن کی قیمتوں میں جواضافہ کیا ہے اس سے عام آدمی حیران ہے۔ ڈیزل کی قیمتوں میں اضافہ کی وجہ سے ایس ٹی اور ممبئی بیسٹ بھی متاثر ہوئی ہے اور اس کا خمیازہ عام لوگ بھگت رہے ہیں۔مہیش تپاسے نے کہا کہ کرناٹک میں ہندومندروں کے قریب غیرہندوؤں کی دوکانیں نہ ہونے کا حکم جاری کیا گیا ہے، جونہایت سنگین ہے۔ آئین نے لوگوں کو جو حقوق دیئے ہیں ان کوچھیننے کا حق کسی کو نہیں ہے۔

اس پریس کانفرنس میں ریاستی ترجمان سنجے تٹکرے، کلائیڈ کرسٹو، ودیا تائی چوان،آشاتائی مرگے اور مہیش چوان وغیرہ موجود تھے۔