موبائل فون کی قیمتیں بڑھ سکتی ہیں

0 4

نئی دہلی ،14ستمبر(پی ایس آئی)اس بار دیوالی کے موقع پر ہینڈسیٹ ڈویلپر کمپنیاں نئے موبائل فون کی قیمتیں کم از کم 7 فیصد بڑھا سکتی ہیں. خاص طور پر فیچر فون اور کم قیمتوں والے اسمارٹ فون بنانے والی کمپنیوں کو یہ قدم ڈالر کے مقابلے روپے میں مسلسل گراوٹ کی وجہ سے اٹھانا پڑ سکتا ہے. بتایا جا رہا ہے کہ زیادہ تر کمپنیوں کے پاس ڈوائسو اور کپونےٹس کا جو اسٹاک ہے، وہ ستمبر کے آخر یا اکتوبر کے آغاز میں ختم ہو جائے گا. ایسے میں نئی انوینٹری کو روپے اور ڈالر کی نئی سطح کا سامنا کرنا ہوگا، جس کی وجہ سے قیمتوں میں اچھال آ سکتا ہے. ماہرین کی مانیں تو ڈالر کے مقابلے روپے کا گرنا جاری رہا تو اکتوبر نومبر میں ہینڈسیٹ انڈسٹری پر بھی اس کا اثر نظر آنا شروع ہو جائے گا. جاپان کی پیناسونک میں موبلٹی ہیڈ پنکج رانا نے بتایا، ‘فیسٹیول موسم میں اس کا (روپے کے کمزور ہونے کا) اور ڈیزل کی قیمتوں میں اضافہ کا فروخت پر اثر پڑ سکتا ہے. (فروخت میں) کچھ حد تک گراوٹ آئے گی. آن لائن پلیئر ڈسکاو¿نٹ کے ذریعے اس کی تلافی کی کوشش کر سکتے ہیں، مگر کچھ منفی اثرات تو پڑے گا. ‘ شاومی کے ایک ترجمان نے بتایا، ‘روپے میں گراوٹ سبھی برےڈس پر کافی دباو¿ بنا رہی ہے. یہ گراوٹ اگر اسی طرح سے جاری رہی تو ہمیں سال کی آخر میں اسمارٹ فونز کی قیمتوں میں تبدیلی کرنا پڑے گی، خاص طور پر رےڈمی 6A کے لئے. ‘ اس کے علاوہ آئی سی ای اے کے چیئرمین پنکج موہندرو نے کہا، ‘سب سے برا اثر فیچر فون سےگمےٹ پر پڑے گا، ان کی قیمتوں میں کم از کم 7 فیصد کا اضافہ ہوگا.’ اس معاملے پر اےچ اےم ڈی اور ویوو نے کہا کہ وہ پہلے سے موجود اپنے فون کی قیمتوں کو مستحکم رکھتے ہوئے روپے کی نئی سطح پر نظر بنائے ہوئے ہیں اور اسی کے مطابق آگے کا فیصلہ لیں گے.