ریاست کے5 مقامات پر اردو گھرکا تعمیری کام اختتام کے مراحل میں

2

جلد ہی بہتر سہولیات کے ساتھ انہیں شروع کردیا جائے گا:نواب ملک

ممبئی: ریاست میں اردو زبان کی ترقی اور مراٹھی وراردو کے مابین تخلیقی نظریات کو فروغ دینے کی غرض سے ریاستی حکومت کے محکمہ اقلیتی امور نے ریاست کے ۵مقامات پر اردو گھر تعمیرکرنے کافیصلہ کیا ہے، جن کا تعمیری کام کو جلدازجلد مکمل کرنے کی غرض سے محکمہ تیزی کے ساتھ کام کررہا ہے نیز ان کے انتظامی امور کے لئے پالیسی تیار کرلی گئی ہے۔ یہ اطلاع آج یہاں اقلیتی امور کے وزیر نواب ملک نے دی ہے۔

نواب ملک نے اردوگھروں کے تعمیری صورت حال کے بارے میں اطلاع دیتے ہوئے بتایا کہ ناندیڑ میں اردو گھر کی تعمیر کے لئے8.16کروڑروپئے کا فنڈ منظور کیا گیا تھاجس کا کام مکمل ہوچکا ہے اورجلد ہی اس کا افتتاح کیا جائے گا۔ شولاپور میں اردو گھر کی تعمیرآخری مرحلے میں ہے جس کے لئے اب تک 6.82کروڑ روپئے کافنڈ جاری کیا جاچکا ہے۔ مالیگاؤں کے اردوگھر کا تعمیری کام مکمل ہوچکا ہے اوراس کو شروع کرنے کی کارروائی آخری مرحلے میں ہے۔ ممبئی میں ممبئی یونیورسٹی کالینہ کے کیمس میں اردو گھر تعمیر کرنے کی تجویز ہے جس کی رپورٹ جلد ہی یونیورسٹی کی جانب سے حکومت کو پیش کی جائے گی۔ ناگپورمیں اسلامک کلچرل سینٹر کی عمارت کو اردو گھر کے طور پرتیار کیا جارہا ہے، جس کے لئے 50لاکھ روپئے کا فنڈ جاری کیا جارہا ہے۔

نواب ملک نے کہا کہ ان اردوگھروں کے تعمیری کاموں کو جلد ازجلد مکمل کرتے ہوئے انہیں اردوزبان کے فروغ کے لئے شروع کرنے کے لئے محکمہ اقلیتی امور کی جانب سے تیزی سے کام کیا جارہا ہے۔ ان گھروں کا استعمال، ان کی دیکھ بھال، ان کی درستگی نیز انہیں بہتر طور پر چلانے کے لئے بنیادی قواعد وضوابط حکومت کی ہدایات کے تحت تیار کرلئے گئے تھے، جن میں اب کچھ نئے ضوابط بھی شامل کرتے ہوئے ایک مربوط پالیسی جاری کی گئی ہے۔ ان اردوگھروں کی کارروائی نیز تقافتی پروگرامس کے انعقاد کے لئے ضلع کلکٹر کی صدارت میں ثقافتی کمیٹی نیز ڈپٹی ضلع کلکٹر کے صدارت میں ضمنی ثقافتی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔

وزیراقلیتی امور نے بتایا کہ ان اردوگھروں میں سال بھر زیادہ سے زیادہ تقافتی پروگرامس، مختلف زبانوں کی کتابوں کی اشاعت جیسی سرگرمیاں ہونگی۔ ان اردوگھروں میں مطالعہ روم، لائبریری، اردوومراٹھی نیز ہندی زبانوں کے اخبارات، اردوزبان کے رسالے وکتابیں دستیاب ہونگی۔ نئی دہلی کے نیشنل کاؤنسل فار پرموشن آف اردو لینگویج کے تحت چلائے جانے والے مختلف تربیتی کورسیس کے طرز پر ان اردوگھروں میں بھی کورسیس چلائے جائیں گے، جن کے لئے کاؤنسل کے ذریعے وضیفے وہدایات بھی دی جائیں گی۔ان کے علاوہ کاؤنسل کی جانب سے چلائے جانے والے غیرادروداں طبقے کو اردو زبان سکھانے کی کلاس بھی چلائی جائے گی۔مجھے یقین ہے کہ اردو زبان کو فروغ دینے کے ساتھ مراٹھی اور اردو کے مابین نظریاتی تبادلے کو بڑھاکر ریاست میں ثقافتی تحریک کو مزید مضبوط کرنے میں یہ اردو گھر اہم کردار ادا کریں گے۔جلد ہی ان اردو گھروں کا تعمیری کام مکمل کرتے ہوئے بہتر سہولیات کے ساتھ انہیں شروع کردیا جائے گا۔