90 ہزار ایس ٹی ملازمین کوابھی تک تنخواہ نہیں

188

ممبئی: جنوری کا مہینہ نصف گزرنے کو آیا لیکن ابھی تک ایس ٹی ملازمین کو ان کی تنخواہ نہیں ملی ہے۔ ایم وی اے حکومت کے دوران ایس ٹی ملازمین کو انصاف دلانے کے نام پر ہنگامہ برپاکرنے والے گن رتن سداورتے اور گوپی چند پڈلکر اب کہاں ہیں؟ کیاانہیں ایس ٹی ملازمین کی اس حالت زار پر اب ذرا بھی رحم نہیں آرہا ہے؟ یہ سوال این سی پی کے ریاستی ترجمان مہیش تپاسے نے کیا ہے۔

انہوں نے کہا ہے کہ ریاست کے 90ہزار ایس ٹی ملازمین کو ابھی تک دسمبر ماہ کی تنخواہ نہیں ملی ہے۔ ایم وی اے حکومت کے دوران ان ملازمین کی تنخواہ کے لیے ہرماہ 360کروڑ روپئے ریاستی حکومت کے فنڈ سے کیا جاتا تھا۔ اب گزشتہ ۶ماہ سے ریاست میں شندے فڈنویس کی حکومت ہے، اس کے باوجود ملازمین کو وقت پر تنخواہ نہیں مل رہی ہے جو

افسوسناک ہے۔تپاسے نے کہا کہ بی جے پی کی قیادت والی حکومت ریاست میں قائم ہونے کے باوجود ایس ٹی ملازمین کو اپنی تنخواہوں کے لیے پریشان ہونا پڑتا ہے۔ ایم وی اے کے دوران یہی سداورتے اور پڈلکر ایس ٹی ملازمین کے مسیحابننے کی کوشش کررہے تھے۔

سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ایم وی اے کے دور میں ایس ٹی ملازمین کی یہ مسیحائی کیا اس وقت کی حکومت کوبدنام وپریشان کرنے کی غرض سے تھی؟ کیا اب ایس ٹی ملازمین کے دکھ درد دور ہوگئے ہیں؟ ایس ٹی ملازمین ان دونوں مسیحاؤں کو ڈھونڈ رہے ہیں، کیا وہ شندے فڈنویس حکومت کے خلاف ایس ٹی ملازمین کو انصاف دلانے کے لیے سامنے آئیں گے؟