MPCC Urdu News 21 Dec 22

20

کرناٹک حکومت کی غنڈہ گردی پر ای ڈی حکومت خاموش:ناناپٹولے

مرکزی حکومت اور بی جے پی کی آشیرباد سے کرناٹک کی حکومت نے مہاراشٹر کو گھیر لیاہے

مہاوکاس اگھاڑی کا اسمبلی کی سیڑھیوں پر ای ڈی حکومت کے خلاف زبردست احتجاج اور نعرے بازی

ناگپور:کرناٹک کے وزیر اعلی بسواراج بومئی کہہ رہے ہیں کہ وہ مہاراشٹر کو ایک انچ بھی زمین نہیں دیں گے۔ سرحدی معاملے پر کرناٹک حکومت آئے روز غنڈہ گردی کر رہی ہے۔ مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ کے ساتھ بات چیت کے بعد بھی کرناٹک جان بوجھ کر مہاراشٹر کے اشتعال انگیزی کررہا ہے۔ لیکن اس اشتعال انگیزی وغنڈہ گردی کا مناسب جواب دینے کے بجائے مہاراشٹر حکومت نے پراسرار پر خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ آخر کس دباؤ کی وجہ سے شندے فڈنویس حکومت کرناٹک کے خلاف ایکشن لینے سے پیچھے ہٹ رہی ہے؟ یہ سوال آج یہاں مہاراشٹر پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر ناناپٹولے نے کیا ہے۔

اسمبلی کے احاطے میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے کانگریس کے ریاستی صدر نانا پٹولے نے کہا کہ مرکزی حکومت کو مہاراشٹر کرناٹک سرحدی تنازعہ میں مداخلت کرنی چاہیے، لیکن وہ ایسا نہیں کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کرناٹک حکومت جان بوجھ کر مہاراشٹر کو دھمکی دے رہی ہے کیونکہ کرناٹک، مہاراشٹر اور مرکز میں بھی بھارتیہ جنتا پارٹی کی حکومت ہے۔ لیکن بی جے پی کو جان لینا چاہیے کہ مہاراشٹر کے سامنے جھکانک آسان نہیں ہے۔ کانگریس کے ریاستی صدر نے کہا کہ کرناٹک اور مہاراشٹر کے وزرائے اعلیٰ نے مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ سے ملاقات کی، لیکن اس کے بعد بھی کرناٹک حکومت کی غنڈہ گردی جاری ہے۔ پٹولے نے کہا کہ یہ سب مرکزی حکومت کی مہربانی سے ہو رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی اور وزیر اعظم نریندر مودی کا منصوبہ مہاراشٹر کو توڑنے کا ہے اور بدقسمتی سے مہاراشٹر میں ای ڈی حکومت بھی بزدلوں کی طرح کام کر رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ کرناٹک حکومت کو اس کی ہی زبان میں جواب دینے کی ضرورت ہے۔

مہاوکاس اگھاڑی کے ارکان نے بدھ کو بھی اسمبلی کی سیڑھیوں پر ریاستی حکومت کے خلاف نعرے لگائے۔ اپوزیشن کے اراکین نے کہا کہ ہم کرناٹک کے سی ایم بومئی کی غنڈہ گردی کو برداشت نہیں کریں گے۔ اگھاڑی ارکان نے ناگپور اراضی گھوٹالے کے الزام کے بعد چیف منسٹر سے استعفیٰ کا بھی مطالبہ کیا۔