498(A)مقدمہ میں اب شوہر کی فوراً گرفتاری ہوگی سپریم کورٹ نے جہیز سے متعلق نیافیصلہ دیا

0 13

جہیز سے متعلق قانون (498 اے)پر اپنے فیصلے میں سپریم کورٹ نے کہا کہ اب شکایت کی شنوائی کے لیے کسی’ فیملی ویلفیئر کمیٹی ‘کی ضرورت نہیں ہوگی ۔حالانکہ شوہر کے پاس Anticipatory bailکا آپشن برقرار رہے گا۔

جہیز سے متعلق قانون (498 اے)پر اپنے فیصلے میں سپریم کورٹ نے کہا کہ اب شکایت کی شنوائی کے لیے کسی’ فیملی ویلفیئر کمیٹی ‘کی ضرورت نہیں ہوگی ۔حالانکہ شوہر کے پاس Anticipatory bailکا آپشن برقرار رہے گا۔

کورٹ کا کہنا ہے کہ متاثرہ خاتون کے تحفظ کے لیے اس طرح کا فیصلہ کافی ضروری ہے۔ حالانکہ شوہر کے پاس Anticipatory bailکا آپشن برقرار رہے گا۔ سپریم کورٹ نے کہا  کہ سماج میں عورت کو مساوی  حقوق ملنے چاہیے ، اس میں کوئی دو رائے نہیں ہے۔ ساتھ ہی ہم ایسا بھی فیصلہ نہیں دے سکتے کہ مرد پر کسی طرح کا غلط اثر پڑے۔

کورٹ نے 2 ججوں والی  بنچ کے فیصلے میں تبدیلی کرتے ہوئے کہا کہ سزا کے قانون میں موجود خامیوں کو آئینی طور پر درست کرنے  کی عدالتوں کے پاس کوئی گنجائش نہیں ہے۔ کورٹ نے کہا کہ ہم نے جہیز سے متعلق ظلم و زیادتی کے معاملوں میں گرفتاری ، Anticipatory bailکے اہتمام کو محفوظ رکھا ہے۔

واضح ہو کہ 2017 میں سپریم کورٹ کی 2 ججوں کی بنچ نے آرڈر دیا تھا کہ جہیز سے متعلق ظلم و زیادتی کے معاملے میں شوہر یا اس کی فیملی کی سیدھی گرفتاری نہیں ہو سکتی ہے۔ حالانکہ چیف جسٹس دیپک مشرا نے اس پر عدم اتفاق کا اظہار کیا تھا۔