‘بھارت جوڑو یاترا’ کی کامیابی نے بی جے پی کے چندر شیکھر باونکولے کی نیندیں اڑا دیں

14
  • بی جے پی نے ہمیشہ توڑنے کا کام کیا، انہیں کیسے پتہ چلے گا کہ جوڑنے کی کیا اہمیت ہے
  • *’بھارت جوڑو یاترا’ سیاسی فائدے کے لیے نہیں بلکہ ملک کو متحد کرنے کے لیے ہے۔

ممبئی: کانگریس کے رکن پارلیمنٹ راہول گاندھی کی قیادت میں کنیا کماری سے ایک بے مثال بھارت جوڑو یاترا شروع ہوئی ہے اور اس پد یاترا کو عوام کی طرف سے کافی پذیرائی مل رہی ہے۔ اس پد یاترا میں تمام ذاتوں اور مذاہب کے لوگ آزادانہ طور پر حصہ لے رہے ہیں اور پوری دنیا نے بھی اس پد یاترا کا نوٹس لیا ہے۔ ایک طرف جہاں وزیر اعظم نریندر مودی کی میٹنگوں کو لوگوں سے کم رسپانس مل رہا ہے وہیں ہر طرف بھارت جوڑو یاترا کا چرچا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ بھارتیہ جنتا پارٹی کے ریاستی صدر چندر شیکھر باونکولے کی نیندیں اڑ گئی ہیں، اس لیے وہ پد یاترا پر بلاوجہ تنقید کر رہے ہیں۔ بی جے پی پر یہ حملہ

مہاراشٹر پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر نانا پٹولے نے کیا ہے۔

نانا پٹولے نے واضح کیا کہ بھارت جوڑو یاترا سیاسی فائدے کے لیے نہیں بلکہ ملک کی جمہوریت اور آئین کو بچانے کے لیے شروع کی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مرکز کی بی جے پی حکومت جمہوریت اور آئین کو نظرانداز کرتے ہوئے آمرانہ انداز میں ملک پر حکومت

کر رہی ہے۔ لوگ بی جے پی کی اس آمرانہ اور من مانی انتظامیہ سے تنگ آچکے ہیں۔ بی جے پی کے پاس مہنگائی، بے روزگاری اور گرتی ہوئی معیشت جیسے مسائل پر بات کرنے کے لیے کچھ نہیں ہے، اس لیے اس پارٹی کے لیڈر بھارت جوڑو یاترا پر تنقید کرکے لوگوں کی توجہ ہٹانے کی کوشش کر رہے ہیں تاکہ وہ اپنی ناکامیوں کو چھپا سکیں۔

کانگریس کے ریاستی صدر نے کہا کہ بی جے پی کے ریاستی صدر چندر شیکھر باونکولے کو کانگریس پارٹی اور بھارت جوڑو یاترا کے فائدے اور نقصانات کے بارے میں نہیں سوچنا چاہئے۔ کانگریس پارٹی اس کی اہل ہے۔ انہوں نے کہا کہ عوام نے بی جے پی کے کانگریس مکت بھارت کے منصوبے کو ناکام بنا دیا ہے۔ نریندر مودی کی مقبولیت کافی حد تک گر چکی ہے اور ان کی میٹنگوں میں بھیڑ جمع نہیں ہو رہی ہے۔

اجلاسوں میں نشستیں خالی ہیں۔ دوسری طرف راہول گاندھی کی پد یاترا کو عوام کی جانب سے زبردست ردعمل مل رہا ہے۔ کانگریس کے ریاستی صدر نے کہا کہ ملک میں ایسا ماحول ہے کہ بھارت جوڑو یاترا ایک تاریخی تبدیلی لائے گی۔ بی جے پی نے ہمیشہ توڑنے کا کام کیا ہے، ایسے میں انہیں کیسے پتہ چلے گا کہ جوڑنے کی کیا اہمیت ہے۔