!-- Auto Size ads-1 -->

وزیراعلیٰ ووزیرداخلہ سے نسیم خان کا مطالبہ

ممبئی:عبادت گاہوں خصوصاً مساجد کے لاوٴڈاسپیکر کے استعمال سے متعلق حکومتی اجازت نامہ سے پیداشدہ صورت حال میں آج سابق وزیروریاستی کانگریس کے کارگزارصدر نسیم خان نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ ماہانہ بنیاد پر دیاجانے والا اجازت نامہ سالانہ بنیاد پر دیا جائے نیز اس کی مکمل فیس معاف کی جائے۔ نسیم خان نے ان مطالبات پر مبنی ایک مکتوب وزیراعلیٰ، وزیرداخلہ، وزیرمحصول ووزیرتعمیرات عامہ کو روانہ کیاہے۔

اپنے مکتوب میں نسیم خان نے کہا ہے کہ عبادت گاہوں میں استعمال ہونے والے لاوٴڈاسپیکر سے متعلق چونکہ حکومت سپریم کورٹ کے حکم کی پابندی کررہی ہے جس کے تحت اجازت لینا ضروری ہے۔ عبادت گاہوں خصوصامساجد کے ذمہ داران اجازت نامہ حاصل کررہے ہیں جو ماہانہ بنیاد پر دیا جارہا ہے اور جس کے لئے ماہانہ پونے سات سوروپئے کی فیس وصول کی جارہی ہے۔ عبادت گاہوں کا انتظام چونکہ عوامی تعاون سے کیا جاتا ہے اس لئے ماہانہ اجازت نامہ حاصل کرنا اور ہرماہ اس کی فیس اداکرنا بہت سی عبادت گاہوں خصوصاً مساجد کے لئے نہایت مشکل امر ہے۔ اس لئے حکومت سے میرا مطالبہ ہے کہ ماہانہ بنیاد پر دیا جانے والا یہ اجازت نامہ سالانہ بنیاد پر دیا جائے نیز اس کی فیس جو ۷۷۴۰روپئے ہوتی ہے، وہ معاف کی جائے۔

واضح رہے کہ گزشتہ دنوں نسیم خان نے صدارت میں ساکی ناکہ میں ممبئی ومضافات کی تقریباً پونے دوسو تنظیموں کے ذمہ داران اور ائمہ کرام کی ایک مشاورتی میٹنگ ہوئی تھی جس میں لاوٴڈاسپیکر کے استعمال اور اجازت نامہ سے متعلق پیداصورت حال پر غور وخوض کیا گیا تھا۔ اس میٹنگ میں متفقہ طور پر یہ طئے کیا گیا تھا کہ حکومت سے سالانہ بنیاد پر اجازت دینے اور فیس کو معاف کرنے کی گزارش کی جائے۔ اس ضمن میں بات کرتے ہوئے نسیم خان نے کہا کہ لاوٴڈاسپیکر کا تنازعہ پیدا ہونے کے بعد مساجد کے ذمہ داران میں حددرجہ بےچینی پائی جارہی تھی کیونکہ اجازت نامے کے حصول میں کافی دشواری پیش آرہی ہے۔ حکومت چونکہ سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق اس تنازعے کو حل کرنا چاہتی ہے اس لئے اس نے لاوٴڈاسپیکر کے استعمال کے لئے اجازت نامہ مشروط کردیا ہے۔ لیکن اس معاملے میں مشکل یہ ہے کہ یہ اجازت نامہ ماہانہ بنیاد پر دیا جارہا ہے اور اس کے لئے پونے سات سوروپئے فیس وصول کی جارہی ہے۔ بہت سی ایسی مساجدبھی ہیں جن کے لئے نہ صرف ماہانہ اجازت نامہ بلکہ اس کی فیس تک ادا کرنا مشکل ہوتا ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ حکومت کے اختیار میں ہے کہ وہ یہ اجازت نامہ سالانہ بنیاد پر جاری کرے اور اس کی فیس معاف کرے۔ اس لئے میں نے حکومت سے یہ مطالبہ کیا ہے کہ وہ اجازت نامہ سالانہ بنیاد پر دے اور اس کی فیس مکمل طو رپر معاف کرے۔