MPCC Urdu News 5 Sep 22

6

ملک کے اتحاد کو برقراررکھنے کے لیے ۷ ستمبرسے بھارت جوڑو یاترا: جیتوپٹواری

عدم مساوات اور نفرت کی سیاست کو توڑکر اتحاد کے لیے کانگریس کی پدیاترا: بالاصاحب تھورات

ہماری دعا ہے کہ بھگوان امیت شاہ کو ملک کے مفاد میں کام کرنے کی عقل دیں: ناناپٹولے

ممبئی:اس وقت ملک کی صورتحال تشویشناک ہے اور تنوع میں اتحاد والے ملک میں نفرت اور عدم مساوات کے بیج بوئے جا رہے ہیں۔ ملک کی سالمیت داؤ پر لگی ہوئی ہے۔ مہنگائی، بے روزگاری جیسے مسائل بڑھتے جارہے ہیں لیکن مرکز کی مودی حکومت ان سلگتے ہوئے مسائل کو نظر انداز کرکے عوام میں دیگرمسائل کو اچھال رہی ہے۔ راہل جی گاندھی کی قیادت میں کانگریس پارٹی نے ملک کی سالمیت کو یقینی بنانے کے لیے 7 ستمبر سے کنیا کماری سے کشمیر تک بھارت جوڑو یاترا کا اہتمام کیا ہے۔یہ اطلاع آج یہاں مدھیہ پردیش کانگریس کمیٹی کے کارگزار صدر اور سابق وزیر جیتو پٹواری نے دی ہے۔

بھارت جوڑو پد یاترا کے بارے میں جانکاری دینے کے لیے گاندھی بھون میں ایک پریس کانفرنس کا انعقاد کیا گیاتھا۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے جیتو پٹواری نے کہا کہ یہ پدا یاترا 150 دنوں میں 3500 کلومیٹر کا فاصلہ 12 ریاستوں اور 2 مرکز کے زیر انتظام علاقوں سے طے کرے گی۔ یاترا کے دوران راہل گاندھی مختلف سماجی تنظیموں واداروں سے بات چیت بھی کریں گے۔ ملک کے سلگتے ہوئے مسائل پر بھی بات کی جائے گی۔ ملک میں 10 فیصد لوگوں کے پاس 50 فیصد دولت اور 50 فیصد لوگوں کے پاس 10 فیصد دولت کا تفاوت بڑھتا جا رہا ہے۔ 27 کروڑ لوگ پھر سے غربت کی لکیر سے نیچے چلے گئے۔ مرکزی حکومت 80 کروڑ لوگوں کو مفت راشن دے رہی ہے، یہ ایک خوفناک صورتحال ہوگئی ہے۔ اس یاترا کے دوران ملک میں معاشی تفاوت، سماجی تقسیم، تباہ ہوتی معیشت، سیاست کی مرکزیت جیسے مسائل کو اجاگر کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ملک تمام ذات ومذاہب کے لوگوں کا ہے اور اس سماجی ہم آہنگی کو بگاڑنے کا کام پچھلے کچھ سالوں سے کیا جا رہا ہے۔ ملک کے اس اتحاد کو دوبارہ برقرار رکھنے کے لیے بھارت جوڑو یاترا نہایت اہم ہے۔

اس موقع پربات کرتے ہوئے کانگریس لیجسلیچر پارٹی کے لیڈر بالاصاحب تھورات نے کہا کہ تحریک آزادی کے دوران مہاتما گاندھی نے 1942 میں ’چلا جاؤ‘ کا نعرہ دیا تھا اور پورا ملک متحد ہو گیا تھا، اب ایک بار پھر وقت آ گیا ہے کہ مرکز کی ظالم حکومت کے خلاف دوبارہ متحد ہوا جائے۔ لوگوں کے درمیان تفریق، تفاوت اور نفرت کی سیاست پچھلے کچھ سالوں سے عروج پر ہے اور اس کو ختم کرکے ہم آہنگی پیدا کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس ملک کی جمہوریت اور آئین خطرے میں ہے ایسے میں کانگریس پارٹی کی ذمہ داری ہے کہ وہ ملک کے اتحاد کے لیے پہل کرے اور اس کے لیے بھارت جوڑو یاترا کا اہتمام کیا گیا ہے۔مہاراشٹر میں یہ پدیاترا دیگلور سے ہوتے ہوئے گزرے گی اورناندیڑ کے راستے ریاست بھر میں 383 کلومیٹر کا فاصلہ 16 دنوں میں طے کرے گی۔ مہاراشٹر پردیش کانگریس کی جانب سے اس یاترا کے پروگرام کو مہاراشٹر میں مزید دو دن تک بڑھانے کی کوششیں جاری ہیں۔

کانگریس کے ریاستی صدر نانا پٹولے نے اس موقع پر کہا کہ بی جے پی کی حکومت میں ملک کا سماجی اور سیاسی ماحول دونوں خراب ہو گیا ہے۔ ملک کی سرحدیں محفوظ نہیں ہیں۔ چین نے ہندوستان کی سرحد پر دراندازی کررکھی ہے۔ جموں و کشمیر میں ابھی تک انتخابات نہیں کرائے جارہے ہیں، کشمیری پنڈتوں کے قتل میں اضافہ ہوا ہے۔ ملک کے عوام مہنگائی اور بے روزگاری کے شکار ہیں۔ ملک کی سلامتی پر توجہ دینے اور ملک میں سلگتے مسائل کو حل کرنے کے بجائے مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ صرف سیاسی فائدے کے لیے ممبئی آئے ہیں۔ ہماری دعا ہے کہ بھگوان امت شاہ کو ملک کو بیچنے کی نہیں بلکہ ملک کی بھلائی کے لیے کام کرنے کی عقل دیں جائے۔

اس پریس کانفرنس میں مدھیہ پردیش کانگریس کے ورکنگ صدر جیتو پٹواری، کانگریس کے ریاستی صدر نانا پٹولے، قانون ساز کانگریس پارٹی کے لیڈر بالاصاحب تھورات، ایم ایل اے وجاہت مرزا، ریاستی جنرل سکریٹری دیوآنند پوار، پرمود مورے، ریاستی سکریٹری سچن گنجال اور دیگر موجود تھے۔