مودی حکومت میں صنعتکاروں کے قرض دومنٹ میں معاف ہوتے ہیں

10
  • لیکن کسانوں کا کوئی قرض معاف نہیں ہوتا ہے: راہل گاندھی
  • مودی حکومت صرف عوام میں خوف اور دہشت پھیلارہی ہے

ہنگولی:مرکز کی بی جے پی حکومت عوام میں نفرت، تشدد، خوف پھیلارہی ہے جس کے خلاف یہ پدیاترا شروع کی گئی ہے۔ بی جے پی وآر ایس ایس ملک بھر میں خوف کا ماحول بنارہی ہے اور عوام کے دباؤ کے تحت رکھنے کی کوشش کررہی ہیں۔ کسان صبح ۴ بجے سے اپنے کام کی شروعات کرتے ہیں، پسینہ بہاتے ہیں لیکن ان کی فصلوں کو قیمت نہیں مل رہا ہے۔ فصل انشورنس کے لیے پرائیویٹ کمپنیوں کو قسط ادا کرتے ہیں، بارش، طوفان وژالہ باری سے فصلوں کو نقصان ہوتا ہے لیکن انہیں کوئی معاضہ نہیں ملتا ہے۔ مودی حکومت ملک کے صنعتکاروں کے قرض تو دومنٹ میں معاف کردیتی ہے لیکن کسانوں کے قرض معاف نہیں ہوتے ہیں۔ مرکزی حکومت پر یہ شدید حملہ آج یہاں راہل گاندھی نے کیا ہے۔

ہنگولی ضلع کے کالے گاؤں میں آج کی پد یاترا کے دوران ہونے والی چوک میٹنگ میں ہزاروں لوگوں سے خطاب کرتے ہوئے راہل گاندھی نے بی جے پی، آر ایس ایس اور مودی حکومت کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا کہ بی جے پی کی ریاست میں پٹرول، ڈیزل اور گیس کی قیمتیں کم نہیں ہوئی ہیں۔ اس سے حاصل ہونے والی رقم دو چار صنعت کاروں کی جیبوں میں جاتی ہے۔ مودی کا مقصد چھوٹے تاجروں کو تباہ کر کے دو چار صنعتکاروں کی اجارہ داری لانا ہے۔ جیسے ہی راہل گاندھی نے کہا کہ یہ حکومت ’ہم دو ہمارے دو‘ کی ہے،وہاں پر موجودمجمع نے ’دو سرکار میں، دو بازار میں‘ کہہ کر جواب دیا۔راہل گاندھی نے مزید کہا کہ چین سے درآمد کی جانے والی اشیاء سے چین اور کچھ تاجروں کو فائدہ ہوتا ہے جو یہ سامان فروخت کرتے ہیں۔ یہ موبائل فون ودیگر اشیاء ’میڈ اِن چائنا‘ نہیں بلکہ ’میڈ اِن ہنگولی‘ ہونی چاہئیں۔انہوں نے کہا کہ مودی سرکار لوگوں کوتشدد، مذہب، ذات پات جیسے معاملات میں الجھائے رکھنا چاہتی ہے تاکہ لوگوں کی توجہ بنیادی مسائل کی جانب نہ ہو۔ تعلیم، صحت غرض کہ ہربنیادی سیکٹر کی نجکاری ہو چکی ہے اور عام آدمی اس کا متحمل نہیں ہو سکتاا س لیے ہم سب کو تعلیم و صحت کے لیے اپنی آواز بلند کرنی ہوگی۔

راہل گاندھی نے کہا کہ مودی کی حکومت میں غریبوں کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے۔ پبلک سیکٹر ریلوے، بینک، تعلیم، ہسپتال سب کچھ نجی کاروباریوں کی جیبوں میں ہیں۔فوج، بی ایس ایف، سی آر پی ایف کے نوجوان ملک کے لیے مرنے کو تیار ہیں لیکن یہاں بھی مودی حکومت اگنی پتھ اسکیم لے آئی ہے۔ جوانوں کو اچھی ٹریننگ دی جانی چاہئے لیکن مودی حکومت صرف چھ ماہ کی ٹریننگ دے رہی ہے، یہ جوان چیلنج کا سامنا کیسے کریں گے؟حکومت کی اگنی پتھ اسکیم فوج کو ہی کمزور کرے گا۔ اب فوجیوں کو ان کی سروس میں اعزاز نہیں بلکہ یہ کہا جائے گا کہ چار سال بعد اپنے گھر جاؤ۔ یہ ملک میں بیروزگاری بڑھنے کا ایک بڑا ذریعہ بنے گا۔