بی جے پی کا مقابلہ تکبرسے نہیں بلکہ اتحاد سے کیا جانا چاہئے: ناناپٹولے

کانگریس ہی بی جے پی کے خلاف واحد متبادل ہے

ممبئی:بی جے پی ملک کے آئین اور جمہوریت کے لیے خطرہ ہے۔بی جے پی کے آمریت کے خلاف محترمہ سونیاگاندھی وراہل گاندھی کی قیادت میں کانگریس مسلسل برسرِپیکار ہے جسے ملک کی عوام دیکھ رہی ہے۔ چونکہ ذاتی مفاد سے زیادہ ملک کا مفاد عزیزہے اس لئے بی جے پی کا مقابلہ تکبر سے نہیں بلکہ اتحاد سے کیے جانے کی ضرورت ہے۔ یہ باتیں مہاراشٹر پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر ناناپٹولے نے کہی ہیں۔

ممبئی کے دورے پر آئی ہوئیں مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی کے بیان پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے نانا پٹولے نے کہا کہ طاقت، پیسہ اور خودمختاراداروں کا غلط استعمال کرتے ہوئے بی جے پی جمہوریت اور آئین کو تباہ کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ بی جے پی کے اس آمریت کے خلاف کانگریس پارٹی مسلسل لڑ رہی ہیں۔ یہ راہل گاندھی ہی تھے جو مودی اور بی جے پی کے خلاف ڈٹ کر کھڑے رہے۔ لینڈ ایکویزیشن قانون میں تبدیلی اور تینوں سیاہ زرعی قوانین کے معاملے میں کسانوں کے ساتھ مضبوطی سے کھڑے ہوکر راہل گاندھی نے مودی حکومت کے خلاف جدوجہد کی۔ بی جے پی کی تقسیم کی پالیسی، مہنگائی، بیروزگاری، کسان مخالف پالیسیوں اور عام آدمی کے مسائل پر کانگریس نے مسلسل تحریک چلائی۔ وقت آگیا ہے کہ اپنے ذاتی مفاد کو بالائے طاق رکھتے ہوئے ملک کے مفاد کو فوقیت دیا جائے اور جمہوریت وآئین کو بچانے کے لئے تمام ہم خیال سیاسی پارٹیاں متحد ہوکر جدوجہد کریں۔ ایک ریاست تک محدود کوئی سیاسی پارٹی بی جے پی کا متبادل نہیں بن سکتی۔ کانگریس ہی بی جے پی کے خلاف واحد متبادل ہے۔