بیڑ میں درگاہ کی زمین ہڑپنے والے 15؍لوگوں کے خلاف ایف آئی آر : وقف بورڈ کی املاک میں کسی بھی قسم کی خرد برد کرنے والوں کو ہرگز بخشا نہیں جائے گا: نواب ملک

0 115

ممبئی: بیڑ میں حضرت شہنشاہ ولی عرف کوچک شاہ ولی کی درگاہ کو وقف کی گئی زمین جعلی دستاویزات کے ذریعے ہڑپ کرنے والے 15؍لوگوں کے خلاف ایف آئی آر درج ہوئی ہے۔یہ ایف آئی آر امین الزماں نے درج کرائی ہے جو بیڑ ضلع وقف بورڈ کے آفیسر ہیں۔

انہوں نے گزشتہ کل آئی پی سی کی دفعہ 409،420، 467، 468،471، 34؍ اور42؍اے کے تحت درج کرائی ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ بیڑ میں مشہور حضرت شہنشاہ ولی عرف کوچک شاہ ولی درگاہ کے لئے نظام کے دور سے 796؍ایکڑ 37گنٹہ زمین وقف ہے جس میں کچھ زمینوں کے اصل کاغذات میں خرد برد کرکے نیز جعلی کاغذات کے ذریعے پاتوروڈ کے رہنے والے حبیب الدین سردارالدین الدین صدیقی نے اپنے اور اپنے تین بھائیوں کے نام کروالی ہیں جبکہ دیگر 12لوگوں نے بھی اسی طرح سے زمینوں میں خرد برد کی ہیں۔

شیواجی نگر بیڑ پولیس اسٹیشن میں درج ایف آئی آر میں بیڑ ضلع وقف بورڈ کے آفیسر نے زمین کے تعلق سے پورے کوائف بیان کئے ہیں جس میں انہوں نے کہا ہے کہ بیڑ کے مشہور حضرت شہنشاہ والی عرف کوچک شاہ ولی درگاہ کو وقف شدہ زمینیں ضلع کے کئی مقامات پر ہیں جن میں پاتوروڈ، پاڈل سنگی، آگر ناندور اور تلوڈا میں ہیں جبکہ بیڑ شامل ہیں۔ ان زمینوں کے سات بارہ میں خرد برد کرکے پاتوروڈ کے

رہنے والے حبیب الدین سردارالدین صدیقی نے کچھ افسران کی مدد سے ملکیت میں اپنا اور اپنے تین بھائیوں کے نام درج کروالئے۔ اس بدعنوانی میں ضلع کے ڈپٹی کلکٹر(پیمائش زمین) پرکاش اگھاؤ میں بھی شامل تھے اور ان کا نام بھی ایف آئی آر میں درج ہے۔ جن لوگوں کے خلاف ایف آئی آر درج کرائی گئی ہے ان میں حبیب الدین سردارالدین صدیقی، رشید الدین

سردار الدین صدیقی، سلیم الدین سردارالدین صدیقی، اشفاق غوث شیخ، عظمت اللہ رضاء اللہ سید، عزیز عثمان قریشی، مجاہد مجیب شیخ، پرکاش اگھاؤ پاٹل، ریونیو محکمہ کے دوافسران کھوڈ اور منڈلک، پی کے شیخ، اس وقت کے تلاٹھی ہندولے، پی ایس آندھلے اور اس وقت کے تحصیلدار کے نام شامل ہیں۔

اس تعلق سے وقف بورڈ کے وزیر نواب ملک نے کہا ہے کہ جن لوگوں نے بھی وقف کی املا ک میں خرد برد کی ہے، انہیں کسی قیمت پر نہیں بخشا جائے گا۔ ایسے تمام افراد کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے گی جنہوں نے بھی وقف بورڈ کے کسی املاک یاجائیداد

میں کوئی خرد برد کی ہے۔ یہی نہیں بلکہ ان سے وہ املاک واپس بھی لی جائے گی۔نواب ملک نے کہا کہ وقف کی املاک قوم کی امانت ہیں اور اس کی دیکھ بھال کی ذمہ داری محکمہ وقف بورڈ کی ہے۔ ہما را۔ محکمہ کسی صورت یہ برداشت نہیں کرے گا کہ قوم کی اس امانت میں کوئی خیانت ہو۔ ہمارا محکمہ نہایت ایمانداری کے ساتھ کام کررہا ہے اور یہی وجہ ہے کہ محکمہ کے افسران خود آگے بڑھ کر وقف کی املاک پر قبضہ کرنے والوں کے خلاف ایف آئی آر درج کروارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ وقف کی بہت سی املاک پر لوگوں پر قبضے کی خبریں ہیں، ہم ان تمام سے متعلق معلومات جمع کررہے ہیں۔ اگر کوئی اس میں خرد برد کا ثبوت سامنے آتا ہے تو اس کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی جائے۔

darga kochak shah wali..pdf