ممبئی: کروڑوں ہندوستانیوں اورمجاہدین آزادی کی توہین کرنے والی فلم اداکارہ کنگناراناوت کا پدم شری واپس لیا جائے اور اس کے خلاف مقدمہ درج کرتے ہوئے اسے گرفتار کیا جائے۔ یہ مطالبہ آج یہاں این سی پی کے قومی ترجمان واقلیتی امور کے وزیر نواب ملک نے کیا ہے۔ واضح رہے کہ کنگناراناوت نے اپنے ایک متنازعہ بیان میں کہا ہے کہ ملک کو جوآزادی ملی تھی وہ بھیک تھی، اصل آزادی 2014میں ملی ہے۔ کنگنا کے اس بیان کی ہرجانب سے مذمت کی جارہی ہے۔

نواب ملک نے کہا کہ 1857سے آزادی کی تحریک شروع ہوئی۔ لاکھوں مجاہدین آزادی نے اپنی جانوں کی قربانیاں پیش کیں۔ مہاتما گاندھی کے ذریعے اس ملک میں ایک عظیم جدوجہد شروع کئے جانے کی وجہ سے انگریزوں نے بھارت کو آزاد کرنے کا اعلان کیا اور15/اگست1947کو ملک کو آزادی ملی۔ ایک جانب ملک کو آزادکرانے میں اس قدر جانوں کے نذرانے پیش کئے گئے، قربانیاں دی گئیں اوردوسری جانب سے فلم کی ایک اداکارہ کنگناراناوت اوورڈوس کی طرح کچھ بھی ہذیان بک رہی ہے۔ ہمارا مطالبہ ہے کہ مرکزی حکومت اس کو دیا گیا پدم شری اس سے چھین لے، اس کے خلاف مقدمہ درج کرے اور اسے گرفتار کرے۔

آپ کتنوں کو بدنام کریں گے اور جیل میں ڈالیں گے؟

ہمارے پاس بہت ایم ایل اے ہیں: جینت پاٹل

ممبئی:دو چار وزراء کی جان بوجھ کرتے ہوئے اگر آپ جیل میں ڈالیں گے تو ہمارے پاس اور بھی بہت سے ایم ایل ہیں۔ ہمارے پاس کوئی کمی نہیں ہے۔ آپ کتنے لوگوں کو بدنام کروگے۔ کتنے لوگوں کو اندر ڈالوں گے؟ یہ سوال آج یہاں این سی پی کے ریاستی صدر ووزیرآب پاشی جینت پاٹل نے کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بی جے پی ریاست میں مختلف طریقوں سے مہاوکاس اگھاڑی حکومت کو کمزور کرنے اور اسے گرانے کی کوششیں کررہی ہے۔ بی جے پی کی خواہش ہے کہ یہ حکومت جلد گرجائے لیکن ہم ملک کے آئین کے دائرے میں رہ کر کام کر رہے ہیں، اس لیے کسی کو حکومت کو برخاست کرنے کا حق نہیں ہے اور کوئی ایسا کربھی نہیں سکتا۔ اسمبلی میں جب تک اکثریت ہمارے پاس ہے اس وقت تک حکومت گرانا ممکن نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ای ڈی کی چھاپے ماری اب معمول کی بات ہوچکی ہے۔ ریاست کی عوام کو بی جے پی کے اس کھیل کی عادت ہوچکی ہے اور وہ اسے اب سنجیدگی سے نہیں لیتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ریاست میں مہاوکاس اگھاڑی حکومت ہے اس لئے بی جے پی کے ذریعے تمام ایجنسیوں کا استعمال ہورہا ہے، اگر بی جے پی کی حکومت ہوتی تو ایک بھی چھاپے ماری نہیں ہوتی۔

جینت پاٹل نے کہا کہ اقلیتی امور کے وزیرنواب ملک نے جو باتیں منظرِ عام پر لائی ہیں اور جو الزامات لگائے ہیں وہ چونکانے والے ہیں۔ جعلی سرٹیفکیٹ کے ذریعے ملازمت حاصل کیا گیا۔ این سی بی ان تمام باتوں کی تصدیق کرے۔ انہوں نے کہا کہ نواب ملک مسلسل آواز اٹھارہے ہیں جس کی وجہ سے آرین خان کا کیس دوسرے کو سونپا گیا ہے۔ نواب ملک نے جو تحریک شروع کی ہے ہم سب اس کی مکمل حمایت کرتے ہیں۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔