MPCC Urdu News 20 Dec 22

15

ناگپور اراضی گھوٹالہ معاملے پر وزیراعلیٰ شندے استعفیٰ دیں:نانا پٹولے

ای ڈی حکومت کے خلاف ودھان بھون کی سیڑھیوں پر ایم وی اے کا زبردست احتجاج

ناگپور:مہاراشٹراسمبلی کے سرمائی اجلاس کے دوسرے دن بھی مہا وکاس اگھاڑی نے شندے فڈنویس حکومت کے خلاف جارحانہ موقف اپنایا۔ وزیر اعلیٰ ایکناتھ شندے جب شہری ترقیات کے وزیر تھے تو انہوں نے ناگپور میں 100 کروڑ روپے کا پلاٹ ایک بلڈر کوانتہائی کم قیمت پر دیا تھا۔ اب عدالت نے اس معاملے میں وزیر اعلیٰ پر بھی شکنجہ کسا ہے۔ مہاراشٹر پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر نانا پٹولے نے کہا کہ اب اس انکشاف کے بعد وزیر اعلیٰ ایکناتھ شندے کو ایک منٹ کے لیے بھی اپنے عہدے پر رہنے کا کوئی حق نہیں ہے۔ شندے کو فوری طور پر اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دینا چاہئے۔

مہاوکاس اگھاڑی کے ایم ایل ایز نے ودھان بھون کی سیڑھیوں پر کھڑے ہوکر شندے فڈنویس (ای ڈی) حکومت کے خلاف جم کر نعرے بازی کی۔ جس کے بعد کانگریس کے ریاستی صدر نانا پٹولے نے کہا کہ عدالت نے ایک طرح سے وزیر اعلیٰ ایکناتھ شندے کے فیصلے پر سوالیہ نشان لگا دیا ہے۔ عدالت کے موقف کو دیکھتے ہوئے وزیراعلیٰ شندے کو اپنے عہدے پر برقرار رہنے کا کوئی حق نہیں ہے۔ کانگریس کے ریاستی صدر نے کہا کہ اس وقت کے وزیر داخلہ انل دیشمکھ اور سنجے راٹھور نے مہاوکاس اگھاڑی حکومت کے دوران الزامات سامنے آتے ہی اپنے عہدوں سے استعفیٰ دے دیا تھا۔ دوسری طرف عدالت کے اتنے سنگین تبصرے کے باوجود وزیر اعلیٰ اپنا عہدہ کیوں نہیں چھوڑ رہے ہیں؟ پٹولے نے کہا کہ وزیر اعلیٰ ایکناتھ شندے استعفیٰ دیدیں ورنہ ہم اس معاملے کو سختی سے ایوان میں اٹھائیں گے۔

اجلاس کے دوسرے دن کے آغاز سے قبل کانگریس پارٹی کے دفتر میں مہاوکاس اگھاڑی کے سینئر لیڈروں اور ایم ایل ایز کی میٹنگ ہوئی۔ اس میٹنگ میں اسمبلی کے کام کاج کی حکمت عملی طے کی گئی اور ارکان کی رہنمائی کی گئی۔ اس میٹنگ میں سابق وزیر اعلیٰ ادھو ٹھاکرے، اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر اجیت پوار، کانگریس لیجسلیچر پارٹی کے لیڈر بالاصاحب تھورات، کانگریس کے ریاستی صدر نانا پٹولے، سابق وزرائے اعلیٰ اشوک چوہان، پرتھوی راج چوہان، این سی پی کے ریاستی صدر جینت پاٹل، چھگن بھجبل، دلیپ ولسے پاٹل اور قانون ساز کونسل میں اپوزیشن لیڈر امباداس دانوے سمیت کئی لیڈران موجود تھے۔

صبح اسمبلی کا سیشن شروع ہونے سے پہلے مہاوکاس اگھاڑی کے ممبران نے ودھان بھون کی سیڑھیوں پر ریاستی حکومت کے خلاف جم کر نعرے بازی کی۔ اپوزیشن ارکان نے کہا کہ متحدہ مہاراشٹر پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا۔ اس کے علاوہ’50کھوکے،ایکدم اوکے‘ اوربی جے پی کے ذریعے عظیم شخصیات کی توہین پر جئے شیواجی کے نعرے لگائے گئے۔

900سے زائد گرام پنچایتوں پر کانگریس کی جیت

مہاوکاس اگھاڑی میں پہلا مقام حاصل کیا: ناناپٹولے

ناگپور ضلع میں 236گرام پنچایتوں میں سے 200پر کانگریس کی جیت

نائب وزیراعلیٰ دیوندرفڈنویس کے گود لیے ہوئے پھیٹری گاؤں میں بھی بی جے پی کی شکست

ناگپور:ریاست میں گرام پنچایتی انتخابات میں کانگریس پارٹی نے 900 سے زیادہ سیٹیں جیتی ہیں اورریاست میں مہاوکاس اگھاڑی میں پہلے نمبر پر ہے۔بی جے پی کے جیت کے دعوے جھوٹے ہیں۔ بی جے پی ریاستی صدر کے ضلع میں بی جے پی کو کراری شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے اوراس نتیجے سے یہ ثابت ہوا ہے کہ دیہی علاقوں کے لوگوں نے بی جے پی و شندے گروپ کو مکمل طور پر مسترد کردیا ہے۔اس ردعمل کا اظہار مہاراشٹر پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر نانا پٹولے نے کیا ہے۔

میڈیا سے بات کرتے ہوئے ناناپٹولے نے کہا کہ گرام پنچایت انتخابات میں کانگریس واتحادی پارٹیوں نے زبردست کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے۔ دیہی علاقوں کے لوگوں نے بھی کانگریس پارٹی اور مہاوکاس اگھاڑی پر اپنا اعتماد ظاہر کرتے ہوئے جیت پر مہر ثبت کردی ہے۔ بی جے پی اور شندے گروپ کی گاؤں میں کوئی عزت باقی نہیں بچی ہے۔ مہاوکاس اگھاڑی کی جیت کے خوف سے بی جے پی و شندے گروپ ودھان بھون کی سیڑھیوں پر احتجاج کا ڈرامہ کررہے ہیں۔

ناناپٹولے نے کہا کہ چونکہ دیہی علاقوں میں کانگریس کی گرفت ابھی تک مضبوط ہے، اس لیے ہم کانگریس پارٹی پر لوگوں کے دکھائے گئے اعتماد کو درست ثابت کریں گے۔ ناگپور ضلع میں 236 گرام پنچایتوں میں سے کانگریس نے 200 پر شاندار جیت حاصل کی ہے اور بی جے پی کو 36 سیٹیں بھی نہیں ملیں۔ کانگریس نے ناگپور ضلع میں پھیٹری نامی اس گاؤں بھی جیت حاصل کی ہے جسے نائب وزیر اعلی دیویندر فڈنویس نے گود لیا تھا۔ بی جے پی کی جیت کے جھوٹے دعوے ہیں اور دوسرے کے گھر میں بچے پیدا ہونے پر بی جے پی کے لوگ مٹھائیاں بانٹتے ہیں۔ بی جے پی کی شکست کا سلسلہ قانون ساز کونسل کے انتخابات کے بعد سے شروع ہوا ہے اور میونسپل، میونسپل کارپوریشن اور ضلع پریشد کے انتخابات کے بعد اب اسے گرام پنچایتوں میں بھی شکست ہوئی ہے۔ پٹولے نے یہ بھی کہا کہ آنے والے اسمبلی اور لوک سبھا انتخابات میں ہم بی جے پی کودھول چٹادیں گے اور ریاست میں کانگریس کی جیت کا پرچم لہرائیں گے۔