• 425
    Shares

مرکزکی بی جے پی حکومت برٹش حکومت کی ہی طرح ظالم وجابر ہے، ’رائیگاں نہ جائے قربانی‘ مہم کی پونے سے شروعات

ممبئی:جن لوگوں کاملک کی جدوجہدآزادی میں کوئی حصہ نہیں ہے وہ لوگ آج تاریخ کو مسخ اور غلط تاریخ پیش کرکے عوام کو گمراہ کررہے ہیں۔ جن لوگوں نے بھارت ماتا کانام لے کر اقتدار حاصل کیا آج وہی لوگ بھارت ماتا کو بیچنے کے لئے نکلے ہوئے ہیں۔ یہ سخت تنقید آج یہاں مہاراشٹر پردیش کانگریس کمیٹی کے صدرناناپٹولے نے آزادی کی پلاٹینم جوبلی کے تحت مہاراشٹر کانگریس کی جانب سے چلائی جانے والی ریاست گیر مہم ’رائیگاں نہ جائے قربانی‘کی شروعات کے موقع پر کی ہیں۔ اس مہم کی شروعات پونے کے کیسری واڈا سے کی گئی۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے ریاستی صدرنے کہا کہ برٹش حکومت ظالم وجابر تھی۔ تحریک آزادی کو ختم کرنے کے لیے اس نے لوگوں پر بے تحاشا ظلم کیے لیکن مجاہدینِ آزادی ڈگمگائے نہیں۔ انگریز پولیس کی گولیوں سے نہیں ڈرے۔ وہ غیرملکی تھے لیکن فی الوقت کی مرکزی حکومت انگریز حکومت سے کچھ علاحدہ نہیں ہے۔ انگریزی حکمراں اور آج کے صاحبِ اقتدار بالکل ایک جیسے ہیں۔ وہ بھی ظلم کرتے تھے اوریہ بھی وہی کررہے ہیں۔ لوک مانیہ تلک نے انگریزحکومت کے خلاف ’کیا حکومت کا دماغ درست ہے؟‘ کے عنوان سے مضمون لکھا جس کی پاداش میں ان پر غداری کا مقدمہ قائم ہوا۔ آج کی حکومت بھی وہی کررہی ہے۔ مرکزی حکومت کے خلاف آواز اٹھانے والوں کی آوازیں دبائی جارہی ہیں۔ناناپٹولے نے کہا کہ میڈیا کا بھی گلا دبایا جارہا ہے۔ جو حکومت کے خلاف بولتا ہے یا لکھتا ہے اس کے خلاف کارروائی کی جارہی ہے۔ آئین نے ہمیں بولنے کا حق دیا ہے۔ جہاں بھی ناانصافی نظر آئے اس کے خلاف آواز اٹھانی چاہئے۔ جمہوریت کے چار ستونوں میں سے ایک عدلیہ کی کیا حالت کردی گئی ہے؟ اس کا مشاہدہ ہم کرہی رہے ہیں۔ آزادی کی لڑائی میں ہندومسلم کی تفریق کسی نے نہیں کی۔ ہر مذہب اور ذات کے لوگوں نے آزادی کی جدوجہد میں حصہ لیا لیکن فی الوقت ہندوؤں اورمسلمانوں میں تفریق پیدا کرکے نفرت پھیلایا جارہا ہے۔ بڑی مشقتوں اور جدوجہد کے بعدحاصل ہونے والی آزادی کو پامال کیا جارہا ہے۔

ہندوستان کی جنگِ آزادی میں کانگریس کے اہم کردار کا حوالہ دیتے ہوئے ناناپٹولے نے کہا کہ آزادی سے قبل کانگریس نے ظالم، جابر وآمرانہ ذہنیت رکھنے والی حکومت کے خلاف سخت جدوجہد کی۔ جدوجہد آزادی کے ابتدائی دور میں لوک مانیہ تلک ومہاتماگاندھی کے ساتھ ہزاروں مجاہدین نے قربانیاں دیں۔ آزادی سے قبل برٹش حکومت کو مضبوط ومنظم تحریک سے اکھاڑ پھینکنے کے بعد کانگریس نے اس ملک میں جمہوریت وسیکولرازم کا نظام دیا۔ پنڈت جواہرلال نہرو، سردار ولبھ بھائی پٹیل، مولانا ابوالکلام آزاد، ڈاکٹر باباصاحب امبیڈکر وغیرہ نے ملک کی تعمیر وترقی میں اہم کردار ادا کیا۔ فی الوقت کی موجودہ حکومت نے ملک کی اس یکجہتی ورجمہوریت کو کمزور کرنا شروع کیا ہے۔ اس لیے مرکزی حکومت کو بھرپور جواب دینے ونئی نسل کو کانگریس کی روشن تاریخ سے روشناش کرانے کے لیے ملک کے آزادی کی پچہترویں سال میں داخل ہونے کے موقع پر’رائیگاں نہ جائے قربانی‘ نامی یہ مہم ریاست گیر سطح پر چلائی جائے گی۔ ملک سے محبت کرنے والے تمام لوگوں کو اس مہم میں فخریہ انداز میں شریک ہونا چاہئے۔

اس موقع پر مہاراشٹرپردیش کانگریس کمیٹی کی جانب سے جدوجہدآزادی میں حصہ لینے والے شہید راج گرو، نرائن دابھاڑے، شنکرراؤ مورے، جے دھے، تلک، مرچنٹ، بھڈکے وغیرہ کے اہلِ خانہ نیز اوشادیسائی، رام بھاؤ جوشی، وید بندھو جیسے مجاہدینِ آزادی کا ناناپٹولے کے ہاتھوں تکریمی سرٹیفکٹ دے کر اعزاز کیا گیا۔ اس کے علاوہ جدوجہدآزادی میں کانگریس کے کردار کو واضح کرنے والی ایک شارٹ فلم کی نمائش بھی کی گئی۔ آج یکم اگست سے 15؍اگست تک ریاست کے مختلف علاقوں میں نیزسوشل میڈیا کے ذریعے ریاستی کانگریس کی جانب سے یہ مہم چلائی جانے کی اطلاع ناناپٹولے نے دی۔اس پروگرام میں ریاستی وزیر ڈاکٹر وشیواجیت کدم، ایم ایل اے شردرنپسے، ریاستی کانگریس کے کارگزار صدر چندرکانت ہنڈورے، ریاستی کانگریس کے نائب صدرموہن جوشی، رمیش باگوے، سابق ایم ایل اے الہاس پوار، دپتی چودھری، کمل ویوہارے، شیام پانڈے، روہت تلک، اس مہم کے کوآرڈنیٹر وریاستی جنرل سکریٹری ابھئے چھاجیڑ وونائک دیشمکھ، وجیے امبھورے، این ایس یو آئی کے عامر شیخ، موجودہ وسابق میونسپل کونسلر، عہدیداران وکارکنان بڑی تعداد میں موجود تھے۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔