• 425
    Shares

ممبئی: سیلاب سے بے گھر ہوئے 16؍ہزار متاثرین میں این سی پی ویلفیئر ٹرسٹ کے ذریعے ڈھائی کروڑ روپئے کے 20ہزار برتنوں وبستروں پر مشتمل کٹس تقسیم کی جائے گی۔یہ اطلاع آج یہاں این سی پی کے قومی صدرشردپوار نے ایک پریس کانفرنس میں دی ہے۔اس سے قبل این سی پی یوتھ ونگ ممبئی کے کارگزارصدر نتن دیشمکھ کی جانب سے متاثرہ علاقوں کے لوگوں کی علاج کے لیے جانے والی ۵ /ایمبولینس کو شردپوار نے ہری جھنڈی دکھا کر روانہ کیا۔

این سی پی ویلفیئر ٹرسٹ کے ذریعے سیلاب متاثرین میں یہ امدادی اشیاء آئندہ دو دنو ں میں تقسیم کی جائیں گی۔ اس کے لیے رائیگڑھ ضلع کی ذمہ داری ممبرپارلیمنٹ سنیل تٹکرے، رتناگیری کے لیے ایم ایل اے شیکھرنکم اور سابق ایم ایل اے سنجے کدم، سندھودرگ ضلع کے لیے اروند ساونت، ستارا کے لئے وزیربالاصاحب پاٹل اور وکرم سنگھ پاٹنکر، سانگلی ضلع کے لیے این سی پی کے ریاستی صدر جینت پاٹل اور ان کے معاونین کو ذمہ داری دی گئی ہے۔ اس کے علاوہ ضلعی سطح پربھی پارٹی کے لیڈران وکارکنان اپنے اپنے طور پر مدد کریں گے۔ اس موقع پر شردپوار نے یہ بھی اطلاع دی کہ ممبئی یوتھ این سی پی کے کارگزار صدر نتن دیشمکھ نے سیلاب سے متاثرہ علاقوں کی طبی امداد کے لئے ۵ ایمبولینس دی ہیں جبکہ سابق ایم ایل اے او رآل انڈیا کیمسٹ ایسوسی ایشن کے صدرجگناتھ شندے ادویات کی فراہمی کررہے ہیں۔

این سی پی ویلفئیر ٹرسٹ کے ذریعے 16؍ہزار لوگوں کو 20ہزار گھریلو برتن، جن لوگوں کے مکانات کو نقصان ہوا ہے انہیں 20ہزار بستروچادریں، کورونا سے محفوظ رکھنے والے ایک لاکھ ماسک، ڈاکٹر سیل کے صدر ڈاکٹرنریندرکالے کے ذریعے 250ڈاکٹروں کی ٹیم ادویات کے ساتھ لوگوں کی مدد کے لیے پہونچ چکی ہے۔ اس کے علاوہ شدیدبیمارلوگوں کو دواخانوں میں داخل کرایا جائے گا نیز انہیں ادویات کی فراہمی کی جائے گی۔ شردپوار نے کہا کہ متاثرہ علاقوں کا دورہ لوگوں کو راحت پہونچانے کے لیے ہوتا ہے، جنہیں ذمہ داریاں دی گئی ہیں وہ اپنا فرض بخوبی نبھائیں۔ حکومتی مشینری ومقامی سطح پر لوگ کام کررہے ہیں اس لئے دیگرلوگ دورے کرکے بھیڑ جمع نہ کریں تاکہ راحت رسانی کے کاموں میں خلل پڑے۔

اس موقع پر شردپوار نے کہا کہ سیلاب سے ۶ ؍اضلاع متاثر ہوئے ہیں جبکہ ۴ ؍اضلاع میں نقصانات زیادہ ہوئے ہیں۔ اس ضمن میں امداد، راحت رسانی وبازآبادکاری کے تعلق سے ریاستی حکومت پالیسی کا اعلان کرے گی جبکہ کچھ اعلانات آج ہوئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ وزیرداخلہ دلیپ ولسے پاٹل کے حلقہئ انتخاب مالین میں ہوئے حادثہ میں متاثر ہونے والو ں کی بازآبادکاری کرنا ایک چیلنج تھا لیکن حکومت نے اس چیلنج کو کامیابی کے ساتھ پورا کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سیلاب میں 16؍ہزار مکانات تباہ ہوئے ہیں یعنی کہ 16؍ہزار خاندانوں کی مدد کرنا ناگزیر ہے۔ ان میں رتناگیری، چپیلون اور کھیڑ میں ۵ہزار، رائیگڑھ ضلع میں ۵ہزار، کولہاپورمیں ۲ہزار، سانگلی میں ۲ہزار، سندھودرگ میں 5سو، ستارا میں ایک ہزار مکانات شامل ہیں۔

اس پریس کانفرنس میں ممبرپارلیمنٹ سنیل تٹکرے، وزیرداخلہ دلیپ ولسے پاٹل، قومی ترجمان واقلیتی امور کے وزیر نواب ملک، وزیرصحت راجیش ٹوپے، فوڈاینڈڈرگ ایڈمنسٹریشن کے وزیر ڈاکٹر راجندرشنگنے، وزیرتعمیرات جیتندراوہاڈ، ایم ایل اے ششی کانت شندے، سابق ایم ایل اے وپارٹی کے خزانچی ہیمنت ٹکلے، ریاستی ترجمان شیواجی راؤ گرجے، سابق ایم ایل اے ودھاتائی چوہان، آل انڈیا کیمسٹ ایسوسی ایشن کے صدر جگناتھ شندے اور ریاستی ترجمان مہیش تپاسے وغیرہ موجود تھے۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔