MPCC Urdu News1. 1st June 22

0 6

سونیاگاندھی وراہل گاندھی کوبھیجی گئی ای ڈی نوٹس کی کانگریس کے تمام لیڈران کے ذریعے مذمت

یہ کارروائی سیاسی منافرت کی بنیاد پر ہے، ہم نہ جھکیں گے اور نہ ہی ڈریں گے: ناناپٹولے

گاندھی ، نہرو وامبڈیکر کے نظریات کے برخلاف ملک میں آمریت قائم کرنے کی کوشش: اشوک چوہان

پسماندہ طبقات کو بہتر مواقع دینے پر نوسنکلپ ورکشاپ میں غور: سشیل کمار شندے

شرڈی؍ممبئی: کانگریس کی قومی صدرمحترمہ سونیا گاندھی وممبرپارلیمنٹ راہول گاندھی کو ای ڈی کے ذریعے دی گئی نوٹس سیاسی منافرت اور انتقامی کارروائی کے تحت ہے۔ ملک میں جمہوری طریقے سے منتخب ہوئی حکومت آمرانہ رویہ اختیار کئے ہوئے ہے۔ ای ڈی کی اس نوٹس کا کانگریس پارٹی سخت مذمت کرتی ہے ، اس طرح کی کارروائیوں پر ہم ذرا بھی توجہ نہیں دیتے ہیں۔ یہ باتیں ریاستی کانگریس کے انچارج ایچ کے پاٹل نے کہی ہیں۔ وہ شرڈی میں مہاراشٹر پردیش کانگریس کمیٹی کے زیر اہتمام نوسنکلپ ورکشاپ میں صحافیوں سے بات کر رہے تھے۔

اس پریس کانفرنس میں پر ریاستی صدر نانا پٹولے، وزیر محصول بالا صاحب تھورات، سابق وزیر اعلیٰ سشیل کمار شندے، سابق وزیر اعلیٰ اشوک چوان، خواتین اور بچوں کی بہبود کی وزیر یشومتی ٹھاکر، اسکولی تعلیم کی وزیر ورشا گائیکواڑ، فشریز کے وزیر اسلم شیخ، ریاستی ورکنگ صدر نسیم خان، ایم ایل اے امر راجورکر، ایم ایل اے سنگرام تھوپٹے، ایم ایل اے امیت جھنک، چیف ترجمان اتل لونڈھے، خواتین کانگریس کی صدر سندھیا تائی ساوالاکھے، ڈاکٹر راجو واگھمارے موجود تھے۔

اس موقع پر نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے نانا پٹولے نے کہا کہ ملک میں مذہبی منافرت کے ذریعے آمریت پیداکرنے والی مودی حکومت نے نہرووگاندھی خاندان پر مسلسل تنقیدیں کی ہیں جو ملکی مفاد کے نقطہٴ نظر سے انتہائی افسوسناک ہے۔ کانگریس کی صدر محترمہ سونیاگاندھی کے خلاف ای ڈی کی کارروائی بی جے پی کی گندی ذہنیت کی علامت ہے اور یہ صرف سیاسی منافرت کی وجہ سے کی گئی ہے۔ بی جے پی نے ملک میں ذات پات اور مذاہب کے درمیان مسلسل نفرت پیدا کی ہے۔ ملک کو بیچنے والی اس حکومت نے ابتداسے ہی ملک کے وقار رہے نہروگاندھی خاندان پر تنقیدیں کی ہیں۔۸ سال قبل ختم ہوچکے معاملے کو اس نے پھر کریدنا شروع کردیا ہے۔ سونیاگاندھی وراہل گاندھی پر کی گئی کارروائی صرف اور اصرف سیاسی منافرت اور انتقام کے تحت ہوئی ہے لیکن بی جے پی چاہے جتنی کارروائی کرلے کانگریس پارٹی کبھی نہیں گھبرائے گی۔ آج پورا ملک سونیاگاندھی کے ساتھ ہے، ہم اس آمریت کے آگے کبھی نہیں جھکیں گے اور ملک کے لئے آخری دم تک لڑیں گے۔

تعمیرات عامہ کے وزیر اشوک چوہان نے کہا کہ کانگریس نے ہمیشہ مذہبی ہم آہنگی کو برقرار رکھا ہے۔ لیکن فی الحال بی جے پی حکومت مذہبی منافرت پیداکرنے کے کام میں مصروف ہے۔ کانگریس پارٹی گاندھی جی کے نظریات اور ہندوستان کی تعمیر کے پنڈت نہرو کے خیالات کے ساتھ کام کر رہی ہے۔ فی الوقت ملک میں بابائے قوم مہاتما گاندھی، پنڈت نہرو، ڈاکٹر بابا صاحب امبیڈکر کے افکار پر ضرب لگا کر آمریت پیدا کی جاری ہے۔ اس کا بھرپورجواب بھارت جوڑو ابھیان کے ذریعے دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان کی عوام کانگریس کے ساتھ ہے اور مستقبل میں ہم خیال پارٹیوں کے ساتھ اتحاد کے تمام راستے کھلے ہیں۔

سابق وزیر اعلیٰ سشیل کمار شندے نے کہا کہ اس طرح کی حرکتیں نہایت افسوسناک اور جمہوریت کے لئے بہت خطرناک ہیں۔ کانگریس پارٹی نے ہمیشہ مذہبی ہم آہنگی کو برقرار رکھا ہے اور تمام ذاتوں اور مذاہب کے ساتھ یکساں رویہ اختیار کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ پسماندہ طبقات کو بہترین مواقع فراہم کرنے اوراس محکمہ کے لئے حکومت کی جانب مختص فنڈز کے استعمال کے لئے ممبران نے کچھ مشورے پیش کئے ہیں ، جن پر غوروفکر کیا کیا ہے۔