کورونا ویکسین مہم گھرگھرچلائی جائے

مہاراشٹر کانگریس کے صدر کا وزیراعلیٰ کو مکتوب

ممبئی: مہاراشٹر کانگریس کے صدر ناناپٹولے نے آج ریاست کے وزیراعلیٰ ادھوٹھاکرے کو کو ایک مکتوب لکھ کر مطالبہ کیا ہے کہ کورونا ویکسین گھرگھر دینے کا انتظام کیا جائے کیونکہ حکومت کی جانب سے عائد سخت پابندیوں کی وجہ سے لوگوں کو ویکسین دینے کے مراکز تک پہونچنا مشکل ہورہا ہے اور اس وبا پر قابوپانے کے لیے ویکسین ایک کارآمد ہتھیار ہے۔

ریاستی صدر نے اپنے مکتوب میں لکھا ہے کہ مختلف ممالک میں کیے گئے ویکسینیشن سے یہ بات واضح ہوگئی ہے کہ کورونا کے پھیلاؤ کو روکنے میں ویکسینیشن نہایت کارآمد ثابت ہورہا ہے۔ مہاراشٹر میں بھی بڑے پیمانے پر ویکسین دینے کی مہم شروع کی گئی ہے، لیکن ریاستی حکومت کی جانب سے عائدسخت پابندیوں کی وجہ سے عام لوگوں کو ویکسینیشن سینٹر پر جاکر ویکسین لینے میں دشواری پیش آرہی ہے۔ دیہی علاقوں میں چونکہ ویکسین دینے کے مراکز کی تعداد کم اور دور دور ہیں، اس لیے لوگوں کو وہاں تک پہونچنے میں مزید مشکل پیش آتی ہے۔ یکم مئی کے بعد جب 18سال سے زائد عمر کے تمام لوگوں کو ویکسین دیاجاناشروع کیا جائے گا تو اس وقت ویکسین دینے کے مراکز پر لوگوں کی بھیڑ جمع ہوسکتی ہے جس سے اس وبا کے پھیلنے کا خطرہ مزید بڑھ جائے گا۔انہوں نے کہا ہے کہ ویکسینیشن کے دوران ان تمام ممکنہ پریشانیوں سے محفوظ رہنے کے لیے ریاستی حکومت گھر گھر جاکر لوگوں کو ویکسین دینے کی مہم شروع کرنا چاہیے۔

ناناپٹولے نے اپنے مکتوب میں مزید کہا ہے کہ کورونا کی روک تھام کے لیے حکومتی نظام ہرسطح پر مضبوطی کے ساتھ کام کررہا ہے، لیکن اس وبا پر قابو پانے میں دنیا بھر میں ویکسینیشن ہی ایک موثر ہتھیار کے طور پر سامنے آیا ہے۔ اسرائیل جیسے چھوٹے ممالک کی مثال ہمارے سامنے ہے۔ اس کے علاوہ امریکہ، برطانیہ سمیت دیگر ممالک نے بھی بڑے پیمانے پر ویکسینیشن کی مہم چلائی جس کی وجہ ان ممالک میں کورونا کے مریضوں کی تعداد قابومیں آگئی ہے۔ مہاراشٹر نے ویکسین دینے میں زبردست برتری حاصل کرتے ہوئے 1/کروڑ سے زائد لوگوں کو ویکسین دیا ہے۔ اس بات کے پیشِ نظر کہ ٹیکہ کاری کی اس مہم کے لیے بڑی تعداد میں افرادی قوت کی بھی ضرورت ہوگی،اس کام کے لیے سرکاری ہیلتھ سسٹم کے ساتھ ہی پرائیویٹ اسپتالوں کے عملوں اور غیرسرکاری تنظیموں کی بھی مدد حاصل کی جاسکتی ہے۔جس طرح پولیو کو ختم کرنے کے لیے ملک گیر مہم چلائی گی تھی، اسی نہج پر اگر کوورنا کی ویکسین بھی گھرگھر جاکر دی جائے تو کورونا پر قابو پانے میں بڑی حد تک کامیابی حاصل کی جاسکتی ہے۔

پٹولے نے مزید کہا ہے کہ کورونا کی وبا نے انسانیت کے لیے سنگین خطرہ پیدا کردیا ہے۔ اس کی دوسری لہر بڑی تعداد میں لوگوں کو اپنا شکار بنارہی ہے۔ شہری علاقوں میں بڑے پیمانے پر پھیلی ہوئی یہ وبا اب دیہی علاقوں کو بھی نہایت تیزی سے اپنے لپیٹ میں لے رہی ہے۔ سال بھر سے ہم اس بحران کا مقابلہ کررہے ہیں۔ اسپتالوں میں بیڈس نہیں مل رہا ہے، ریمیڈیسیور انجکشن وآکسیجن کی قلت کی وجہ سے روزآنہ بڑی تعداد میں لوگ اپنی زندگی گنوارہے ہیں۔ اس وبا سے ایک جانب جہاں جانیں ضائع ہورہی ہیں تووہیں دوسری جانب معیشت کی رفتار بھی نہایت دھیمی پڑگئی ہے۔ کورونا کی وجہ سے ہرشعبہ بری طرح متاثر ہوا ہے۔ کانگریس پارٹی کا ابتداء سے ہی یہ موقف رہا ہے کہ اس بحران پر قابو پانے کے لیے بڑے پیمانے پر ویکسینیشن کیا جائے۔ مجھے امید ہے کہ ہمارے اس مطالبے پر غور کرتے ہوئے مناسب فیصلہ کیا جائے گا۔

Letter to Hon’ble CM- 21 April 21.pdf