مرکزکی غیرسنجیدہ وظالم بی جے پی حکومت کے خلاف جدوجہد تیز کیا جائے گا: بالاصاحب تھورات

ممبئی: مرکزکی بی جے پی حکومت کے ذریعے مسلط کردہ سیاہ زرعی قوانین کے خلاف ملک بھر کے کسان سراپا احتجاج بنے ہوئے ہیں۔ گزشتہ 45دنوں سے لاکھوں کسان ان قوانین کی منسوخی کا مطالبہ کرتے ہوئے شدید سردی کے عالم میں دہلی کے سرحدوں پر بیٹھے ہوئے ہیں۔ کسانوں کے اس احتجاج میں اب تک 60سے زائد کسان اپنی جان گنوا چکے ہیں لیکن

مرکزکی غیرسنجیدہ وظالم بی جے پی حکومت کو ابھی تک ہوش نہیں آیا ہے۔ اس مغرور وظالم مودی حکومت کو بیدار کرنے اور کسانوں کی حمایت میں کانگریس پارٹی کے کارکنان 16جنوری کو ناگپور میں راج بھون کا گھیراؤ کریں گے۔ یہ اطلاع آج یہاں مہاراشٹر پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر ووزیرمحصول بالاصاحب تھورات نے دی ہے۔

اس تعلق سے بات کرتے ہوئے تھورات نے کہا کہ مرکز کی مودی حکومت کچھ چنندہ صنعتکاروں کے لیے کام کررہی ہے اور اسے ملک کی غریب عوام، کسانوں ومزدوروں کی کوئی پرواہ نہیں ہے۔ مرکزی حکومت نے پارلیمنٹ کے اصول وضوابط کو ٹھوکر مارتے ہوئے جو تینوں زرعی قوانین پاس کیے ہیں وہ کسانوں کو تباہ وبرباد کرنے والے ہیں۔ کسانوں کا مطالبہ ہے کہ ان

قوانین کو فوری طور پر منسوخ کیا جائے اور کانگریس پارٹی نے بارہا کسانوں کے اس مطالبے کی حمایت کرتے ہوئے مظاہرے واحتجاج کیے ہیں تاکہ مرکزی حکومت بیدار ہو، لیکن اس ظالم ومغرور حکومت کی آنکھوں پر اہنکار کا پردہ پڑا ہے۔ ایک جانب کسان ومزدو تباہ ہورہے ہیں تو دوسری جانب ایندھن کی قیمتوں میں اضافہ کے ذریعے ملک کے غریب عوام کو لوٹا جارہا ہے۔ زرعی قوانین کی

منسوخی اور ایندھن کی قیمتوں میں اضافے کو فوری واپس لینے کے کا مطالبہ کرتے ہوئے 16جنوری کو ناگپور میں راج بھون کا گھیراؤ کیا جائے جس میں ریاست بھر کے کانگریس کے لیڈران وعہدیدارن کے علاوہ عوام کی بڑی تعداد شریک ہوگی۔

تھورات نے کہا ہے کہ کسانوں کے ساتھ مودی حکومت نے عام لوگوں کو لوٹنے کا کاروبار شروع کیا ہے۔ پٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں مسلسل اضافہ کرتے ہوئے منافع کمایا جارہا ہے۔ ایندھن کی قیمتیں 73 سال کی

بلند ترین سطح پر پہنچ گئیں ہیں۔مئی 2014میں پٹرول پر عائد 9.20روپئے ایکسائز ڈیوٹی بڑھاکر 32.98روپئے ردیا ہے۔ فی لیٹر پر 23.78روپئے کا اضافہ گویا 258فیصد کا اضافہ۔ جبکہ ڈیزل پر مئی 2014میں لاگو 3.46روپئے کی ایکسائز ڈیوٹی میں آج 31.83روپئے کا اضافہ کردیا گیا ہے۔ اس طرح ڈیزل پر فی لیٹر28.37روپئے یعنی کہ 820فیصد کا اضافہ کیا گیا ہے۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ عالمی سطح پر خام تیل کی قیمت 110 ڈالر فی بیرل سے گھٹ کر 50 ڈالر فی بیرل ہونے کے باوجود قیمتوں میں یہ اضافہ کیا جارہا ہے۔ مودی حکومت نے اب تک ایندھن کی قیمتوں میں اضافے سے 19 لاکھ کروڑ روپے کا منافع کمایا ہے۔ اس کا اثر عام آدمی اور کسانوں پر پڑ رہا ہے۔

بالاصاحب تھورات نے کہا کہ کانگریس پارٹی نے ہمیشہ کسانوں اور عام لوگوں کے مسائل اٹھائے ہیں اور16جنوری کو ’یوم کسانوں حقوق‘ کا انعقاد کرتے ہوئے مرکزکی مودی حکومت کے خلاف مظاہرہ کیا جائے گا۔ بی جے پی کی مطلق العنانی سے ملک کے لوگ بیزا ہوچکے ہیں۔ یہ حکومت جمہوری اقدار اور آئین کو اپنے پیروں تلے روندرہی ہے۔ کانگریس پارٹی نے اس ظالم حکومت کے خلاف پہلے بھی سڑکوں پر اترکر احتجاج کیا ہے اورآئندہ جدوجہد جاری رکھے گی۔

BiP Urdu News Groups