کانگریس کی صدر محترمہ سونیاگاندھی نے مہاراشٹر میں کورونا کی صورت حال کا جائزہ لیا

کورونا کنٹرول مینجمنٹ کو مزید موثر بنانے کی تجویز پیش

ممبئی: کانگریس کی صدر محترمہ سونیاگاندھی و ممبرپارلیمنٹ راہل گاندھی نے آج ملک میں کانگریس کی اقتدار والی ریاستوں کے وزرائے اعلیٰو اسمبلی کے لیڈران سے ویڈیو کانفرنس کے ذریعے رابطہ کیا۔ اس ویڈیو کانفرنس میں انہوں نے ریاست میں کورونا کی صورت حال کا جائزہ لیتے ہوئے کورونا کنٹرول مینجمنٹ سسٹم کو مزید موثر بنانے کے بارے میں رہنمائی کی اور تجاویز پیش کیں۔ کانگریس کی زیراقتدارریاستوں کے ساتھ مرکزی حکومت جانبداری برتتے ہوئے کورونا کی ویکسین، ٹیسٹنگ کٹ، ریمیڈیسیور انجکشن، آکسجین کی فراہمی ودیگر ضروریات کی فراہمی میں بڑے پیمانے پر عدم توازن نظر آرہا ہے۔ ریاستوں کے وزرائے اعلیٰ و اسمبلی کے لیڈران نے اس موقع پر کہا کہ میڈیکل سازوسامان کی ریاستوں کے درمیان تقسیم میں مزید شفافیت اختیار کرتے ہوئے ریاستوں کو ضرورت کے مطابق ویکسین ودیگر میڈیکل سازوسامان فراہم کیے جانے کی ضرورت ہے۔

اس میٹنگ کی رہنمائی کرتے ہوئے ممبرپارلیمنٹ راہل گاندھی نے کہا کہ کورونا پر قابو پانے کے لیے کانگریس کی ریاستوں کو وہ تمام اقدامات کرنا چاہیے جس کی ضرورت ہے لیکن اسی کے ساتھ اس کا بھی خیال ضروری ہے کہ غریبوں کی روزی روٹی پر اس کا کوئی منفی اثر نہ پڑے۔ کورونا بحران کا سب سے زیادہ اثر عام آدمی وغریبوں کی زندگی پر پڑ رہا ہے، ان کی فکر کرنی چاہیے۔ کانگریس کی صدر کے سامنے مہاراشٹر کی صورت حال پیش کرتے ہوئے وزیرمحصول بالاصاحب تھورات نے کہا کہ مہاراشٹر وکاس اگھاڑی حکومت نے کورونا کی روک تھام پوری طاقت سے کررہی ہے۔ ملک میں سب سے زیادہ کورونا کی ٹیسٹنگ مہاراشٹر میں کیا جارہا ہے۔ ویکسینیشن کے بارے میں بھی مہاراشٹر ملک میں پہلے نمبر پر ہے۔ لیکن مرکزی حکومت مہاراشٹر کو خاطرخواہ ویکسین فراہم نہیں کررہی ہے جس کی وجہ سے ویکسینیشن کی رفتار کم ہوگئی ہے۔ مرکزی حکومت کو مطالبے کے مہاراشٹر کو ویکسین کی فراہمی کرنی چاہیے۔ ریاست میں ریمیڈیسیور انجکشن کی قلت کی وجہ سے بڑی دقت آرہی ہے۔ مرکزی حکومت نے انصاف کے مطابق ریمیڈیسیور انجکشن ودیگر میڈیکل ضروریات ریاستوں کو فراہم کرنی چاہیے۔ مہاراشٹر کی جانب سے یہ مطالبہ محترمہ سونیاگاندھی کے سامنے پیش کیا گیا۔ ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے ہونے والی اس میٹنگ میں راجستھان کے وزیراعلیٰ اشوک گہلوت، پنجاب کے وزیراعلیٰ کیپٹن امریندر سنگھ، چھتیس گڑھ کے وزیراعلیٰ بھوپیش بگھیل، مہاراشٹر اسمبلی کے لیڈر ووزیرمحصول بالاصاحب تھورات، جھارکھنڈ کے وزیرمالیات وجھارکھنڈ کانگریس کمیٹی کے صدر رامیشور سورین سمیت کانگریس کی صدر محترمہ سونیا گاندھی کی مشاورتی کمیٹی کے ممبران شریک تھے۔

مغربی بنگال میں بی جے پی بری طرح ہار رہی ہے:نسیم خان

ممبئی: مہاراشٹر پردیش کانگریس کمیٹی کے کارگزار صدر ومغربی بنگال انتخابات کے لیے کانگریس پارٹی کے اسٹارپرکمپینر محمد عارف نسیم خان نے کہا ہے کہ مغربی بنگال اسمبلی انتخابات کے نتائج آنے میں گوکہ ابھی کافی وقت ہے، لیکن یہاں کی زمینی صورت حال کو دیکھتے ہوئے یہ بات یقینی طور پر کہی جاسکتی ہے کہ بی جے پی یہاں بری طرح ہار رہی ہے اور یہ ہار اس کی ملک بھر میں شکشت کی شروعات ہوگی۔ واضح ہو کہ نسیم خان مغربی بنگال کے چار روزہ دورے پر ہیں جہاں وہ پانچویں، چھٹے وساتویں مرحلے کے انتخابات کے لیے کانگریس کی جانب سے انتخابی مہم چلارہے ہیں۔ انہوں نے شمال24پرگنہ ضلع اور کولکاتا شہر کے مختلف اسمبلی حلقوں میں زوردار انتخابی مہم شروع کررکھی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہماری یہ پوری کوشش ہے کہ جس طرح بھی ممکن ہو بی جے پی کوکمزور کیا جائے اور یہاں کی عوام میں بی جے پی کے خلاف جو غصہ نظرآرہا ہے وہ اس بات کا ثبوت ہے کہ بی جے پی بری طرح شکشت سے دوچار ہوگی۔ انہوں نے کانگریسی امیدواروں کو کامیاب کرنے ہوئے اپیل کیا ہے کہ مغربی بنگال کا یہ الیکشن ملک میں ایک نئے دور کی شروعات ثابت ہوگا۔ مودی وشاہ نے اپنی حددرجہ محنت کے باوجود یہاں کے لوگوں میں بی جے پی سے ناراضگی دور نہیں کرسکے ہیں بلکہ اس میں کچھ مزید اضافہ نظر آرہا ہے۔ اس لیے مجھے یقین ہے کہ بی جے پی یہاں بری طرح شکشت سے دوچار ہوگی۔