شہزادی ڈیانا کے سنہ 1986 میں خلیجی ممالک کے دورے کے لیے تیار کیے جانے والے برقعے کا ایک ڈیزائن رواں ماہ امریکہ میں نیلام کیا جا رہا ہے۔

نیلام کی جانے والی دوسری چیزوں میں لباس کے ڈیزائن اور کپڑے کے نمونے بھی شامل ہیں۔

یہ اشیا شہزادی ڈیانا کے عروسی جوڑے کو ڈیزائن کرنے والی دکان ڈیوڈ اینڈ الیزبتھ امینوئلز سے حاصل کی گئی ہیں۔

شہزادی ڈیانا کے خلیجی ممالک کے دورے کے لیے لباس تیار کرنے کے سلسلے میں شہزادی ڈیانا کی مصاحبہ نے ایک خط میں لکھا: ‘ہر حال میں حیا کا خیال کیا جانا ضروری ہے۔’

ڈیزائنر کے ایک فولڈر پر ‘دورۂ خلیج سنہ 1986 کے دن اور شام کے ملبوسات کے ڈیزائن’ رقم ہے۔

باؤ کے ساتھ برقع کا ڈیزائنتصویر کے کاپی رائٹRRAUCTIONS/ BNPS

ان میں پانچ طرح کے ہاتھ سے تیار کردہ اصلی ڈیزائن شامل ہیں۔

  • ایک برقعے کے نمونے پر ‘ایچ آر ایچ دا پرنسز آف ویلز، سعودی عرب کا دورہ، نومبر 1986، ریزرو لباس’ تحریر ہے
  • ایک بحری اور سفید دھاریوں والا کوٹ ہے جو سفید کامدار لباس کے اوپر پہننے کے لیے ہے
  • ایک شام کا لباس ارغوانی کامدار کپڑے پر ہیرے کی طرح تراشے ہوئے بٹن کے ساتھ ہے
  • ایک دوسرا سفید ریشم کا شام کا لباس ہے جس پر ہیرے کی طرح تراشے ہوئے مادے سے کام کیا گیا ہے

ڈیزائن سے منسلک کپڑے کے نمونے بھی ان کے ساتھ نیلامی کے لیے پیش کیے جا رہے ہیں۔

شہزادی ڈیانا ایمینوئلز کے ساتھتصویر کے کاپی رائٹRRAUCTIONS/BNPS

یہ کلیکشن نادر اشیا کو اکٹھا کرنے والے ایک نجی کلیکٹر کی جانب سے 30 ہزار ڈالر کی بنیادی رقم پر فروخت کیا جا رہا ہے۔

اس ذخیرے میں شہزادی ڈیانا کی مصاحبہ این بیک وتھ سمتھ کا الزابتھ ایمینوئل کے نام خط بھی شامل ہے جس میں شہزادی کے خلیجی ممالک کے دورے کے لیے ڈیزائن کی فرمائش کی گئی ہے۔

انھوں نے اس دورے کے لیے حیادار لباس کو لازمی قرار دیا ہے۔

شہزادی ڈیانا کی مصاحبہ کا ڈیزائنر کے نام خط

شہزادی ڈیانا کا خطتصویر کے کاپی رائٹRRAUCTIONS/ BNPS

شہزادی ڈیانا اور شہزادہ چارلس نے سنہ 1986 میں سعودی عرب کے ساتھ دوسرے خلیجی ممالک کا چھ روزہ دورہ کیا تھا۔

نیلامی کے منتظمین کا کہنا ہے ‘شہزادی ڈیانا نے اس دورے کے دوران مقامی رواج کی پیروی کرتے ہوئے جسم کو زیادہ تر ڈھاپنے والے لباس زیب تن کیے تھے تاہم ان کے گلے کھلے تھے اور ان کے سر پر دوپٹہ نہیں تھا۔’

شہزادی ڈیاناتصویر کے کاپی رائٹGETTY IMAGES

خیال رہے کہ انھیں اس دورے میں انھیں ’برقع نہیں پہننا پڑا تھا۔’

ڈیزائنتصویر کے کاپی رائٹRRAUCTIONS/ BNPS

عشائیے میں وہ لمبی آستین والے لباس میں نظر آتی تھیں جو خصوصی طور پر اس دورے کے لیے تیار کیا گیا تھا۔

بی بی سی اردو کی رپورٹ