اتر پردیش میں کورونا کی دوسری لہر نے اپنا قہر برپا کر رکھا ہے۔ اس کورونا وائرس نے اب تک کئی اہم شخصیتوں کی جان لے لی ہے۔ 7 مئی کو بھی رائے بریلی کے سلون سے بی جے پی رکن اسمبلی دَل بہادر کوری کا کورونا سے انتقال ہو گیا۔ اس طرح کورونا کی دوسری لہر میں ابھی تک بی جے پی کے 4 اراکین اسمبلی کی جان جا چکی ہے۔ یہاں قابل ذکر ہے کہ اس سے قبل بی جے پی کے لکھنؤ مغرب سے رکن اسمبلی سریش کمار شریواستو، اوریا صدر سے رکن اسمبلی رمیش چندر دیواکر اور بریلی کے نواب گنج سے رکن اسمبلی کیسر سنگھ گنگوار کی کورونا سے موت ہو چکی ہے۔

سلون رکن اسمبلی دَل بہادر کوری کا لکھنؤ کے نجی اسپتال میں ایک مہینے سے علاج چل رہا تھا۔ ان کی کورونا رپورٹ نگیٹیو آ گئی تھی۔ اسپتال سے چھٹی بھی مل گئی تھی لیکن دوبارہ وہ پازیٹو ہو گئے اور اسپتال میں داخل کرانے کے بعد ان کا انتقال ہو گیا۔ اس سے قبل 28 اپریل کو بریلی کی نواب گنج سیٹ سے بی جے پی رکن اسمبلی کیسر سنگھ گنگوار کا انتقال ہو گیا تھا۔ کورونا سے متاثر ہونے کے بعد انھیں نوئیڈا کے ایک اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔

23 اپریل کو لکھنؤ مغرب سے بی جے پی رکن اسمبلی رہے سریش شریواستو کا انتقال ہو گیا تھا۔ دو دن بعد ہی ان کی بیوی مالتی شریواستو کا بھی انتقال ہو گیا تھا۔ لکھنؤ کے ہی ایک اسپتال میں سبھی کا علاج چل رہا تھا۔ اس سے کچھ دنوں پہلے ہی سریش شریواستو کے ڈرائیور کی بھی کورونا سے موت ہو گئی تھی۔ سریش شریواستو آر ایس ایس کے پرانے کارکن تھے۔ اپریل کے آخری ہفتے میں ہی 22 اپریل کو اوریا صدر سے بی جے پی رکن اسمبلی رمیش دیواکر کا بھی کورونا سے انتقال ہو گیا تھا۔ کورونا انفیکشن کے بعد انھیں پھیپھڑے کی تکلیف شروع ہو گئی تھی۔ سنگین حالت میں انھیں میرٹھ میڈیکل کالج میں ایڈمٹ کرایا گیا تھا، لیکن انھیں بچایا نہیں جا سکا۔