یوٹیوب نے سعودی عرب کے ریگولیٹرز کی درخواست پر جارحانہ اشتہارات ہٹا دیے

215

جدہ:یوٹیوب نے سعودی عرب کی درخواست پربعض جارحانہ اشتہارات کوہٹا دیا ہے۔سعودی عرب کے میڈیا ریگولیٹرز نے اپنی درخواست میں ان اشتہارات کواسلامی اور سعودی سماجی معیارات سے عدم مطابقت کا حامل قراردیا تھا۔

یوٹیوب کے ترجمان نے عرب خبررساں ذرائع ابلاغ بلومبرگ الشرق کو بتایا کہ جارحانہ مواد نشر کرنے والے مشتہرافراد کے اکاؤنٹس بند کر دیے گئے ہیں۔

ترجمان نے کہا کہ سعودی عرب اوردنیابھرمیں معاشرے کا تحفظ پلیٹ فارم کی اولین ترجیحات میں سے ایک ہے۔گذشتہ سال گوگل نے بالغوں کے مواد کے فروغ کی وجہ سے عالمی سطح پر اپنے پلیٹ فارم سے 28 کروڑ 60لاکھ سے زیادہ اشتہارات ہٹا دیے تھےاور کہا تھا کہ یہ اس کی پالیسیوں سے مطابقت نہیں رکھتے تھے اور نامناسب مواد کے مزید 12 کروڑ 56 لاکھ اشتہارات تھے۔

اتوار کے روز سعودی عرب کے جنرل کمیشن برائے آڈیو ویژول میڈیا (جی سی اے ایم) اور مواصلات اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کمیشن (سی آئی ٹی سی) نے ایک بیان جاری کی تھا۔اس میں گوگل کی ملکیت ویڈیو شیئرنگ پلیٹ فارم یوٹیوب سے جارحانہ اشتہارات ہٹانے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔