ہوشیار، گیان واپی مسجد کا سودہ نا ہونے دے : ✍:پرویز نادر

0 47

بھارت میں عقیدے کی جنگ میں مسلمان مسلسل شکست کھاتا آ رہا ہے،ان کے دلوں کے کیا جذبات ہیں یہ کوئی معنی نہیں رکھتا،اجتماعی طور پر وہ کس موقف کی تائید کرتے ہیں یہ اہم ہے،مداہنت اور بزدلی کی ساری حدود پار ہوچکی،مسلمانوں کی نام نہاد قیادتوں نے بھارتی مسلمانوں کو مصلحت، حکمت اور صبر کے نام پر چور راستوں سے گزار کر ذلت و نکبت کی انتہا تک پہنچا دیا،سوچنے سمجھنے کی ساری صلاحیتوں کو مقفل کردیا گیا،احساسات اور جذبات کو زنجیریں پہناکر غلامی پر رضا مند کردیا گیا،

جو تڑپ اور بے چینی بابری مسجد کی شہادت کو لیکر بھارتی مسلمانوں کی کتاب کے اوراق میں محفوظ کردی گئی وہ تڑپ گیان واپی مسجد کو لیکر کہاں ہے؟ہماری ساری بے چینی کو شیو لنگ کے لطیفوں سے لطف اندوز ہونے میں بدل دیا گیا، جب کہ اس کا تصور انتہائی غیر اخلاقی اور بے حیائی پر منحصر ہے

۔مساجداللہ کے دشمنوں نے اسی دوران اور کئی تاریخی مساجد پر اپنے حق اور کفر و شرک کے معبدو میں تبدیل کرنے کی عرضیاں داخل کردی ہیں، اور ہماری جمیعتوں اور قیادتوں نے اپنی چاکری کا حق ادا کرنا شروع کردیاہے،جہاں ہر مسلمان کو مسجد کے حق میں سراپا احتجاج ہونے کو کہا جاتا ،انہیں پھر صبر کا بذلانہ جام پلایا جارہا ہے،

علمائے دین کو ملک اور ملت کے مفاد میں خاموشی اختیار کرنے کو کہا جارہا ہے،مسجد ہاتھ سے جاتی ہے تو ملت کا مفاد کیا ہے؟اور اکثریتی فرقے و کفر کے علمبردار طبقے کو مذہبی بالادستی مل رہی ہے تو کیا یہی ملک کا مفاد ہے؟ موجودہ مسلم قیادت جس جرم کا ارتکاب کررہی ہے،تاریخ میں اس کی نظیر ملنا مشکل ہے،کسی دور میں ایسا نہیں ہوا کہ اللہ کے گھروں کو بت پرستی اور شرک کی ناپاکی کے لیے دینے پر خاموشی اختیار کی گئی ہو!جس عدلیہ کی سماعت اور انصاف کی گہار لگائی جارہی ہے،اس نے کس بنیاد پر ایک پھوارے کو شیولنگ کہے کر محفوظ کرنے کا حکم دے دیا؟

کیا پھر سے بابری مسجد کی تاریخ کو دہراکر گیان واپی مسجد کو عدلیہ کے ذریعے چھین لیا جائے گا؟ اور ہمیں کفر کی فتح پر راضی کرنے کے لیے عدلیہ اور جمہوریت کے قصیدے پڑھیں جائیں گے؟اور یہ بات بھی امت کو اپنی گرہ میں باندہ لینی چاہیے کہ گیان واپی مسجد کی پامالی کے بعد کئی مساجد کو مسلمان اپنے ہاتھوں سے مشرکوں کو تحفہ میں دیں گے

،یا مساجد کو جبراً ہتیانے کے ساتھ ساتھ یہاں کہ مشرک مسلمانوں کی جان و مال کو اپنے اوپر حلال کردیں گے، اس لیے اب بھی وقت ہے خدارہ اللہ کے گھر کا سودہ نہ ہونے دیں، گیان واپی مسجد کی بازیابی اور بحالی کے لیے کچھ گزارشات اگلی تحریر میں بتاؤں گا،ساتھ ہی میری گزارش ہیکہ اس تحریر کو ہندی اور انگریزی و علاقائی زبانوں میں ٹرانسلیٹ کرکے زیادہ سے زیادہ شئیر کیا جائے
Parveznadir57