ہندوستانی باشندہ 12 سال سے پاکستان میں تھا قید، گھر واپسی جلد، لیکن بیوی کی ہو گئی دوسری شادی

ہندوستانی ریاست بہار کے بکسر سے تعلق رکھنے والا چھوی تقریباً 12 سال قبل پنجاب سے بھٹک کر پاکستانی سرحد میں پہنچ گیا تھا جس کے بعد وہاں کی فوج نے اسے گرفتار کر لیا۔ وہ پاکستان کی قید میں تھا لیکن اب حکومت پاکستان نے اسے آزاد کر دیا ہے۔ اس خبر کے بعد بکسر انتظامیہ کی ایک ٹیم اسے لانے کے لیے گرداس پور روانہ ہو گئی ہے۔

چھوی کی ہندوستان واپسی کی خبر سے اس کی ماں خوشی سے پاگل ہوئی جا رہی ہے۔ وہ تو اپنے بیٹے کو مردہ سمجھ چکی تھی، لیکن پھر اس بوڑھی ماں کو ایسی خوشخبری ملی جس نے اس کے اندر ایک نئی جان ڈال دی۔ اسے پتہ چلا کہ اس کا لاپتہ بیٹا مرا نہیں ہے۔ جس کو مرا ہوا سمجھ کر اس نے آخری رسومات بھی ادا کر دی تھی، وہ زندہ ہے اور جلد ہی اس کی آنکھوں کے سامنے ہوگا۔ اب ماں کی خوشی کا ٹھکانہ نہیں ہے اور آنسو ہیں کہ آنکھوں سے بہتے ہی جا رہے ہیں۔

چھوی جب بکسر پہنچ کر اپنی ماں سے ملے گا تو وہ بھی خوب جشن منائے گا۔ آس پاس کے سبھی لوگ بھی اس کی خوشیوں میں شامل ہوں گے۔ لیکن جب چھوی کو یہ معلوم ہوگا کہ اس کی بیوی دوسری شادی کر چکی ہے، تو یقیناً یہ اس کے لیے کسی جھٹکا سے کم نہیں ہوگا۔ چونکہ گھر کے سبھی لوگوں نے چھوی کو مرا ہوا تصور کر لیا تھا، اس لیے اس کی بیوی نے دوسری شادی کر لی۔ اب حالات عجیب و غریب بن گئے ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق گزشتہ دنوں پاکستان حکومت کے ذریعہ یہ جانکاری دی گئی تھی کہ چھوی نامی ایک نوجوان پاکستان کی جیل میں بند ہے۔ خبر ملنے کے بعد وزارت خارجہ کے ذریعہ اس کی شناخت کے لیے مقامی انتظامیہ سے جانکاری مانگی گئی۔ پولیس ٹیم نے اس کے گھر پر پہنچ کر اس کی تصدیق کی۔ بکسر ضلع انتظامیہ سے چھوی کے لاپتہ ہونے کی تصدیق ہونے کے بعد حکومت ہند نے پاکستان سے اسے ہندوستان کے حوالے کرنے کا مطالبہ کیا۔ گزشتہ 5 اپریل کو پاکستان حکومت نے اسے اٹاری سرحد کے راستے بارڈر سیکورٹی فورس (بی ایس ایف) کو سپرد کر دیا۔ اب بی ایس ایف اسے گرداس پور ضلع انتظامیہ کے حوالے کرے گی۔