ایسا محسوس ہوتا ہے کہ پچھلا ھجری سال بھی چند ہی روز قبل شروع ہوا تھا اور تین سو ساٹھ دن گزر گئے، پتہ نہ چلا کہ یہ قیمتی ایام کس طرح بیت گئے ۔
آہ ! ہماری زندگی کا ایک سال کم ہو گیا ۔ہم اپنی موت سے ایک سال قریب ہوگئے ہماری زندگی کے تین کروڑ دس لاکھ چار ہزار سیکنڈ اس ایک برس میں گزر گئے اور افسوس کہ اس میں سے ایک سیکنڈ بھی دوبارہ لوٹ کر نہیں آسکتا ۔
اگر پچھلے سال ہم نے اپنی زندگی کو دین کے سانچے میں پورے طور پر نہیں ڈھالا تھا تو آج عہد کرنا چاہئے کہ اپنی زندگی مکمل طور پر اطاعت خداوندی اور اتباع رسول اکرم ﷺمیں گزاریں
سال گزشتہ جو نمازیں قضا ہوئی ہیں انہیں جلد از جلد ادا کرلیں اور اب عہد کریں کہ ہر نماز با جماعت ادا کریں گیں، قضا روزے جلد از جلد ادا کرلیں، زکوۃ وصدقات وغیرہ باقی ہوں تو ان کی ادائیگی کے لئے فوری کوشش کریں ،اللہ تعالی سے خوب گڑگڑا کر پچھلی زندگی کی بد اعمالیوں پر معافی طلب کریں ایک ایک گناہ کو یاد کریں ندامت افسوس اور پشیمانی کے آنسو بہاتے ہوئے اپنے رب غفورالرحیم سے رحمت اور عفو کرم کی بھیک مانگیں ۔
انہیں حقوق اللہ کہا جاتا ہے ۔
دوسرے حقوق بندگان الہی کے ہیں،
مثلا ماں،باپ، بھائی، بہن، شوہر، بیوی، اولاد،پڑوسی، رشتہ دار ، ماتحت آقا اور مالک غرض تمام انسانوں کے حقوق ہیں ۔ان میں سے کسی کا حق ادا نہ کیا ہو ،کسی کا دل دکھایا ہو، کسی کو طعنہ دیا ہو،کسی کا مذاق اڑایا ہو،کسی کی غیبت کی ہو، کسی پر بہتان باندھا ہو،کسی کا حق دبایا ہو ایک ایک عمل کو یاد کرکے ہر ایک انسان سے معافی مانگنی ضروری سمجھیں اور ہر ایک کو راضی کرنے کی کوشش کریں،
یہ بات ذہن نشین رہے کہ ہم سب ایک مختصر مدت کےلئے اس دنیا میں آئے ہیں روزآنہ ہم دیکھتے ہیں کہ ہزاروں بوڑھے، بچے،جوان بغیر کسی خبرواطلاع کے اچانک سب کچھ چھوڑ چھاڑ کر اس دار فانی سے الوداع کہہ کر گزر جاتے ہیں ۔انسانی پیش رفتوں اور سائنس کی اس قدر ترقی کے باوجود، موت سے بچنے کا کوئی آلہ نہ تو ایجاد کیا جاسکا ہے اور نہ ہی کیا جاسکتا ہے ۔ہر ایک کو اس دنیا کو چھوڑ کر بارگاہ خداوندی میں حاضر ہونا ہے ۔
اس سلسلہ میں قرآن مقدس ہمیں بار بار متنبہ آگاہ وباخبر کرتا ہے کہ ہمیں اپنے رب کے سامنے اپنی زندگی کی ایک ایک سانس اور ایک ایک عمل کے بارے میں جواب دہی ہوگی
حالانکہ جب بھی کسی کی موت کا وقت آتا ہے تو اللہ تعالی اس کو ایک لمحہ کی بھی مہلت نہیں دیتا ۔
لہذا اس نئے(اسلامی)سال میں عزم مصصم کرلیں کہ ہم اس کا ایک سیکنڈ بھی ضائع نہیں کرنا ہے ۔جو شخص فضول وقت برباد کرتا ہے برباد ہو جاتا ہے، جس طرح جسم کو زندہ رکھنے کے لئے سانس لینا ضروری ہے اسی طرح روح کو زندہ رکھنے کے لئے اللہ کا ذکر ہر وقت ضروری ہے اللہ کا ذکر ہر وقت کرتے رہنے سے ہماری زبان سے محبت بھری باتیں ہی نکلیں گیں اور سلوک بھی ہمارا ہر شخص سے بہتر ہی ہوگا اور ہم ہر ایک کے حقوق برابر ادا کرسکیں گیں
اسی طرح پچھلی زندگی جو کوتاہیوں میں گزری ہے اس کے تلافی ہو جائیگی ۔
بارگاہ ایزدی میں دعا ہے کہ اللہ ہم سب کو اس پر عمل پیرا ہونے کی توفیق عطا فرمائے

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔