ترواننت پورم: ریاست کیرالہ میں کورونا وائرس کی وبا کے بعد ’زیکا وائرس‘ کا خطرہ بھی مزید گہراتا جا رہا ہے اور منگل کے روز یہاں مزید دو افراد میں اس وائرس کی تصدیق کی گئی۔ دو نئے معاملوں کی تصدیق کے بعد کیرالہ میں زیکا وائرس کے کیسز کی مجموعی تعداد 21 سے تجاوز کر گئی۔ کیرالہ کی وزیر صحت وینا جارج نے مزید دو کیسز کی تصدیق کی ہے۔

ایک رپورٹ کے مطابق ترواننت پورم کے میڈیکل کالج میں پیر کے روز ہی متعارف کرائی گئی ٹیسٹنگ سہولیت کے ذریعے جانچ کرنے پر ایک 35 سالہ خاتون میں زیکا وائرس پایا گیا۔ جبکہ دوسرے معاملہ کی تصدیق شہر کے ایک نجی اسپتال میں کی گئی ہے، یہاں ششٹامنگلم کے رہائشی ایک 41 سالہ نوجوان میں زیکا وائرس پایا گیا۔ اس نوجوان کے نمونے کی جانچ کیومبٹور میں کی گئی۔

ریاست میں اب تک زیکا وائرس کے 21 معاملوں کی تصدیق کی جا چکی ہے اور تمام متاثرین کا تعلق ترواننت پورام سے ہے۔ ریاست میں سب سے پہلا معاملہ 8 جولائی کو اس وقت سامنے آیا تھا جب ایک حاملہ خاتون میں زیکا وائرس پایا گیا۔ محکمہ صحت کی جانب سے ترواننت پورم، الاپوجا، تھریشسر ا ور کوجیکوڈ میں زیکا ٹیسٹنگ کی سہولت قائم کی جا چکی ہے۔ نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف وائرالوجی سے ٹیسٹ کے لئے 2100 کٹوں کو طلب کیا گیا ہے۔

ترواننت پورم کے ایم سی ایچ کو 500 ٹریپلیکس اور 500 سنگلیس کٹیں حاصل ہو چکی ہیں۔ ٹریپلیکس کٹوں کے ذریعے ڈینگی، چکنگنیا اور زیکا وائرس تینوں کی جانچ کی جا سکتی ہیں، جبکہ سنگلیکس کٹوں کے ذریعے صرف اور صرف زیکا وائرس کی جانچ کی جا سکتی ہے۔ اسپتال میں پہلے دن 15 نمونوں کی جانچ کی گئی جن میں سے ایک میں زیکا وائرس اور ایک میں ڈینگی وائرس کی تشخیص کی گئی۔