کیا گیانواپی مسجد کا حال بھی بابری مسجد جیسا ہوگا؟

33

وارانسی :6۔جولائی (ایجنسیز)وشو ہندو سینا کی تازہ دھمکیوں سے نظر آتا ہے کہ وارانسی میں واقع گیانواپی مسجد کا حال بھی بابری مسجد جیسا ہی ہونے والا ہے ویسے بھی لال کرشن اڈوانی کے زمانے میں نعرے لگتے تھے کہ رام مندر تو جھانکی ہے کاشی متھرا باقی ہے۔کل سخت گیر ہندو تنطیم وشو ہندو سینا نے کہا ہے کہ اگر شرنگار گوری کی پوجا سے ہندوؤں کو روکا گیا تو گیان واپی کا حشر بھی بابری مسجد جیسا کر دیا جائے گا اور وارانسی میں ایودھیا کی تاریخ دہرائی جائے گی۔

وشو ہندو سینا نے یو گی اور مودی حکومت کو متنبہ کیا ہے ہندوؤں نے انہیں اس لئے اقتدار نہیں سونپا کہ وہ خاموش رہیں بلکہ انہیں اقتدار اس لئے سونپا گیا ہے کہ وہ پوجا کے لئے راہ ہموار کریں۔واضح رہے وشو ہندو سینا کے جنرل سکریٹری دگ وجے چوبے نے کھلے عام دھمکی دی ہے کہ اگر ہندوؤں کو شرنگار گوری کی پوجا سے روکا گیا تو تو گیان واپی کا حشر بھی وہی ہوگا جو بابری مسجد کا ہوا تھا۔ چوبے کے بیان کا سیدھا مطلب یہ ہے کہ اس عبادت گاہ کو بھی منہدم کر دیا جائے گا۔

چوبے نے کہا کہ شرنگار گوری ہندوؤں کی ماتا ہے اور ہندوؤں کو ان کی ماتا کی پوجا سے کوئی نہیں روکا جا سکتا۔وشو ہندو سینا کے جنرل سکریٹری نے یہ بھی اعلان کیا کہ اگست میں کاشی میں سادھو سنت جمع ہوں گے اور وزیر اعظم مودی اور وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ بھی آئیں گے۔ ان دونوں کی موجودگی میں سادھو سنت گیان واپی کے تعلق سے بڑ ا فیصلہ کریں گے۔ ویسے چوبے نے مودی اور یوگی حکومت کو وارننگ دی کہ وہ گیانواپی میں شرنگار گوری کی پوجا کے لئے راہ ہموار کریں۔