٭ عہدیداروں پرقتل کا چارج لگانا غلط نہیں ہوگا ٭ چیف جسٹس سنجیو بنرجی کا سخت ریمارک
٭ 2مئی کو کورونا قواعد پر سختی سے عمل نہیں کیا گیا تو ووٹوں کی گنتی رُکوادیں گے

چنائی :ملک بھر میں جاری کورونا کے قہر کے بیچ مدراس ہائی کورٹ میں ایک سنوائی کے دوران ہائی کورٹ نے کہا ہے کہ الیکشن کمیشن ہی کورونا کی دوسری لہر کے لئے ذمہ دار ہے، کیونکہ اس نے کورونا کے بڑھتے بحران کے دوران بھی انتخابی جلسوں اور ریلیوں کو نہیں روکا۔ قومی چیانل کی خبر کے مطابق مدراس ہائی کورٹ کے چیف جسٹس سنجیو بنرجی نے کہا کہ کورونا کی دوسری لہر کے لئے الیکشن کمیشن ہی ذمہ دار ہے۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن کے عہدیداروں پر اگر قتل کا چارج لگایا جائے تو غلط نہیں ہوگا۔الیکشن کمیشن نے جواب میں کہا کہ کمیشن نے کووڈ گائڈ لائنس پر عمل کرایا اور ووٹنگ کے دن تمام ضابطوں پر عمل کیا گیا، اس پر عدالت نے سخت رخ اختیار کرتے ہوئے کہا کہ جب انتخابی تشہیر ہو رہی تھی تو کیا الیکشن کمیشن دوسرے پلانیٹ یعنی سیارہ پر تھا۔ عدالت نے سختی کے ساتھ کہا کہ اگر 2 مئی کو گنتی کے دوران گائیڈ لائنس پر عمل نہیں کیا گیا اور اس کا بلو پرنٹ تیار نہیں کیا گیا تو وہ ووٹوں کی گنتی رکوا دے گا۔واضح رہے سنوائی کے دوران عدالت نے کہا کہ صحت کا معاملہ انتہائی اہم ہے اور افسوس کی بات یہ ہے کہ اسے یہ یاد دلانا پڑ رہا ہے۔ عدالت نے کہا کہ اس وقت حالات ایسے ہیں کہ انسان کو زندگی کی جنگ لڑنی پڑ رہی ہے۔ ہائی کورٹ نے الیکشن کمیشن کو کہا ہے کہ وہ سکریٹری صحت کے ساتھ مل کر گنتی کے دن کے لئے منصوبہ تیار کریں اور اس منصوبہ کو 30 اپریل تک پیش کرنے کے لئے کہا ہے۔واضح رہے پانچ ریاستوں میں ہونے والے انتخابات کے دوران کورونا کے معاملوں میں اضافہ ہوا ہے اور اب حالات یہاں پہنچ گئے ہیں کہ دنیا ہماری مدد کر رہی ہے۔ ہندوستان میں کورونا کے نئے معاملہ اس وقت سب سے زیادہ ہیں اور یومیہ اموات میں بھی ہندوستان سر فہرست ہے۔وزیر ٹرانسپورٹ ایم آر وجے باسکر نے اس سلسلے میں ایک درخواست دائر کی تھی جس میں الیکشن کمیشن سے درخواست کی گئی تھی کہ وہ سخت حفاظتی اقدامات کو یقینی بنانے اور ووٹوں کی منصفانہ گنتی کو یقینی بنانے کے لئے ایک گائیڈ لائن جاری کرے ۔ چیف جسٹس سنجیو بنرجی اور جسٹس سینتھل کمار رامامورتی نے 6 اپریل کو ہونے والے مرحلہ ون کے انتخابات کے دوران سیاسی جماعتوں کو دانستہ طور پر انتخابی جلسوں میں کورونا کے رہنما خطوط کی خلاف ورزی کرنے سے نہ روکنے کے لئے الیکشن کمیشن کی سرزنش کی۔


اپنی رائے یہاں لکھیں