Waraqu E Taza Online
Nanded Urdu News Portal - ناندیڑ اردو نیوز پورٹل

کورونا وائرس: انڈیا میں گائے کے پیشاب سے وائرس کے علاج کے دعووں کی سچائی کیا ہے؟

IMG_20190630_195052.JPG

ریئلیٹی چیک ٹیمبی بی سی نیوز

انڈیا میں کورونا وائرس کے تصدیق شدہ کیسز کی تعداد دوسرے ممالک کی بہ نسبت کم ہے مگر اس سے نمٹنے کے لیے دیے جانے والے گمراہ کن مشوروں کی بھرمار ہے۔بی بی سی نیوز نے ایسے چند مشہور مشوروں کی حقیقت پرکھی ہے۔گائے کا پیشاب اور گوبر:ایک زمانے سے انڈیا میں گائے کے پیشاب اور گوبر کو مختلف بیماریوں کے روایتی علاج کے طور پر فروغ دیا جاتا رہا ہے۔

اور اب حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کی رکنِ پارلیمان سمن ہریپریا نے انھیں کورونا وائرس کے خلاف استعمال کرنے کی تجویز دی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ’گائے کے گوبر کے کئی فوائد ہیں۔ مجھے لگتا ہے کہ یہ کورونا وائرس کو ختم کر سکتا ہے۔ گائے کا پیشاب بھی فائدہ مند ثابت ہوسکتا ہے۔‘

گائے کے پیشاب میں ممکنہ طور پر موجود بیکٹیریا مخالف صلاحیتوں کے بارے میں پہلے بھی تحقیق کی جاتی رہی ہے۔اور ایک ہندو قوم پرست گروہ نے انڈیا کے دارالحکومت دلی میں اسے کورونا کے علاج کے طور پر فروغ دینے کے لیے گائے کا پیشاب پینے کی تقریب بھی منعقد کی۔مگر انڈین وائرولوجیکل سوسائٹی کے ڈاکٹر شائلندر سکسینا نے بی بی سی نیوز کو بتایا کہ ’گائے کے پیشاب میں وائرس مخالف خصوصیات موجود ہونے کے حوالے سے کوئی طبی ثبوت موجود نہیں ہیں۔‘اس کے علاوہ گائے کا گوبر استعمال کرنا خطرناک ہوسکتا ہے کیونکہ گائے کے فضلے میں خود کورونا وائرس موجود ہو سکتا ہے جو کہ انسانوں کے اندر پھلنے پھولنے لگے گا۔

گائے کے گوبر سے تیار صابن کے علاوہ انڈیا میں ایک کمپنی کاؤ پیتھی سنہ 2018 سے ایسا الکوحل سے پاک ہینڈ سینیٹائزر بھی آن لائن فروخت کر رہی ہے جو اس کے مطابق ’مقامی گائیں سے حاصل کردہ صاف کیے پیشاب‘ کا حامل ہے۔

اس وقت یہ پروڈکٹ ختم ہوچکی ہے۔ اس کے ویب پیج پر لکھا گیا ہے کہ ’طلب میں اضافے کے سبب ہم فی صارف تعداد کو محدود کر رہے ہیں تاکہ زیادہ سے زیادہ گاہکوں تک یہ پروڈکٹ پہنچا سکیں۔‘

اس کے علاوہ ایک مشہور ہندی نیوز چینل پر یوگا سکھانے والے گرو رام دیو نے تجویز دی ہے کہ جڑی بوٹیوں کے ذریعے گھر پر ہینڈ سینیٹائزر بنائے جائیں۔

اس کے علاوہ انھوں نے یہ بھی کہا کہ جیلوئے نامی آیورویدک جڑی بوٹی، ہلدی اور تلسی کے پتے استعمال کرنے سے کورونا وائرس سے بچا سکتا ہے۔

مگر عالمی ادارہ صحت اور امریکہ کے سینٹر فار ڈزیز کنٹرول اینڈ پریوینشن (سی ڈی سی) الکوحل والے ہینڈ سینیٹائرز کے استعمال کی اہمیت پر زور دیتے ہیں۔

اور لندن سکول آف ہائیجین اینڈ ٹروپیکل میڈیسن کی پروفیسر سیلی بلوم فیلڈ کہتی ہیں کہ گھر پر بنایا گیا کوئی بھی ہینڈ سینیٹائزر بے فائدہ ہوگا کیونکہ ووڈکا تک میں صرف 40 فیصد ہی الکوحل ہوتا ہے۔

گذشتہ ہفتے انڈیا کی شمالی ریاست ہریانہ کے وزیرِ صحت انیل وِج نے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ گوشت نہ کھائیں۔

انھوں نے ٹویٹ کی کہ ’سبزی خور بنیں۔ مختلف طرح کے جانور [کا گوشت] کھا کر کورونا وائرس جیسے وائرس نہ بنائیں جو انسانیت کے لیے خطرہ بنتے ہیں۔

اس دوران ایک ہندو قوم پرست گروہ نے دعویٰ کیا ہے کہ کورونا وائرس گوشت خوروں کو سزا دینے کے لیے آیا ہے۔