ہری دوار۔ حکومتوں کی زبردست لاپروائی کی وجہ سے کمبھ میلہ میں کورونا کا قہر بے قابو ہوتا جا رہا ہے۔ آج ایک بار پھر ہریدوار میں کورونا بم پھٹا جب کووڈ ٹسٹ میں 175 سادھو۔سَنت انفیکشن کے شکار پائے گئے۔ ہریدوار کے چیف میڈیکل افسر ایس کے جھا نے اپنے ایک بیان میں بتایا کہ کمبھ میلے میں حصہ لینے والے 175 سادھووں کو کورنا ٹسٹ میں پازیٹو بتایا گیا ہے۔ اب تک کمبھ میں آئے 229 سادھووں کا کورونا ٹسٹ پازیٹو آ چکا ہے۔ یہاں قابل ذکر ہے کہ یہ تعداد صرف ان سادھو۔سَنتوں کی ہے جو کمبھ میں شامل ہوئے ہیں، لیکن ہریدوار میں موجود سادھو۔سَنتوں کی کورونا پازیٹو رپورٹ دیکھی جائے تو یہ تعداد کافی زیادہ ہے۔ گزشتہ روز کی ہی بات ہے جب مختلف اکھاڑوں کے 78 پازیٹو کیس ملے تھے جن میں صرف نرنجنی اکھاڑے کے ہی 22 سادھو شامل ہیں۔ نرنجنی اکھاڑے میں ہزاروں سادھو۔ سنت ہیں جن میں سے کچھ درجن سادھووں کا ہی کووڈ ٹسٹ کرایا گیا ہے۔بتایا جاتا ہے کہ کمبھ میں شامل ہوئے کئی دیگر اکھاڑوں میں بھی کورونا انفیکشن کے کیس ملے ہیں۔ ضلع کے چیف میڈیکل افسر ڈاکٹر ایس کے جھا نے گزشتہ روز بتایا کہ 24 گھنٹے میں پورے ضلع میں 592 سادھو۔سَنت انفیکشن کے شکار ملے ہیں۔ یہاں تک کہ میلہ کنٹرول روم میں باورچی سمیت 6 لوگ انفیکشن کی زد میں بتائے گئے ہیں جس سے ایک ہنگامہ برپا ہو گیا ہے۔میڈیکل افسر کے مطابق ہفتہ سے کمبھ میں آئے اکھاڑوں کی کووڈ جانچ میں تیزی لائی جارہی گی۔
اس کے لیے محکمہ صحت کی اضافی ٹیمیں بھی لگائی جائیں گی۔ علاوہ ازیں ہریدوار کے ضلع مجسٹریٹ سی روی شنکر اور میلہ افسر نے میلے کی رپورٹنگ کرنے پہنچے سبھی میڈیا اہلکاروں سے بھی اپنی جانچ کرانے کی اپیل کی ہے۔اس درمیان ملک میں خوفناک صورت حال اختیار کر رہے کورونا انفیکشن کو دیکھتے ہوئے کمبھ میلہ کے انعقاد پر سوال اٹھاتے ہوئے سپریم کورٹ میں ایک عرضی داخل کر دی گئی ہے۔ عرضی میں کورونا کے حالات کا تذکرہ کرتے ہوئے مطالبہ کیا گیا ہے کہ عدالت فوراً مرکزی حکومت، اتراکھنڈ حکومت اور نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کو حکم دے کہ وہ جلد از جلد ہریدوار کمبھ میں جمع لوگوں کی بھیڑ کو ہٹانے کی ہدایت جاری کرے۔ ساتھ ہی گھر لوٹ رہے لوگوں کے لیے سیکورٹی پروٹوکول طے کرنے کا مطالبہ بھی کیا گیا ہے۔


اپنی رائے یہاں لکھیں