نئی دہلی، 30 اپریل (یو این آئی) کلیویراینٹی وائرل دواکوحکومت ہندکی ریگولیٹری اور اس سے متعلق حکومت ہند کی مختلف ایجنسیان اور وزارت آیوش نے کورونا کے ہلکے سے میڈیم کورونا انفیکشن کے لئے معاون علاج کے طور پر اجازت دی ہے۔ یہ اطلاع اپیکس لیباریٹری نے آج یہاں ورچول ایک پریس کانفرنس میں دی ہے۔اپیکس لیبارٹری کے بین لااقوامی کاروبار مینیجر مسٹر سی آرتھر پال نے بتایا کہ دوائی کی تحقیق سے متعلق نتائج آئی سی ایم آر، آیوش وزارت اور تملناڈو سرکارکو سال 2020 میں ہی سونپ دئے گئے تھے۔ معیار کے سبھی سخت ہدایات کے پیروی کرنے کے بعد ہندوستان سرکار کے آیوش وزارت بذریعہ کلیویرا کو ہلکا پھلکا سے میڈیم (مائلڈ ٹو موڈی ریٹ) کووڈ علاج میں معاون علاج کے طور پر کلیویراکے استعمال کی اجازت دی گئی ہے۔یہ ہندوستان کی پہلی ایسی دوا ہے جس نے تصدیق کئی مرحلے کو پار کیا ہے۔ اس میں CCRAS (مرکزی کونسل برائے تحقیق آیورویدک سائنس) آئی ٹی آر سی (انٹرا ڈسپلینتری ٹکنکل ریویو کمیٹی) اور آیوش وزارت بذریعہ تشکیل کردہ 12 ممبران کے ایک دوسرے کمیٹی کے ذریعہ دوائی کی تصدیق کی گئی ہے۔ اس کمیٹی کے قیادت ایمس کے دواسازی محکمہ کے سابق پروفیسر ڈاکٹر ایس کے ملک نے کی تھی۔

تملناڈوحکومت کی طرف سے جانچ کی اجازت ملنے کے بعد چنئی کے اومن دورار سرکاری میڈیکل کالج میں تیس دن کے لئے سو لوگوں کا انتخاب کیا گیا۔ سو لوگ کے نمونوں کو پچاس پچاس کے دو حصہ میں تقسیم کیا گیا ان میں سے ایک گروپ ایسا تھا جس میں کووڈ کے عامل سارس – سی او یو ٹو کے شناخت ہوچکی تھی اور تمام سرکار اورعالمی صحت تنظیم کی ہدایت نامہ مطابق علاج کیا جارتھا۔ کووڈ کے علاج کے مصدقہ پروٹوکول کے ساتھ صرف اس گروپ کے لوگ کلویرا کے دو ٹیبلٹ دن میں دو وقت تک 14 دن دیا گیا۔ دیکھا چلا گیا کلیویراے مریض کے ٹھیک ہونے کی اوسط شرح تیز ہوگئی اور 14 دن میں حیرت انگیز نتائج دیکھے گئے۔ یہ تبدیلی پائرکسیا یا جسم کے درد میں کمی، سانس لینے کی شرح معول ہونے (24 / منٹ سے کم) آکسیجن کے سطح میں بہتری (94 فیصد زائد) وغیرہ کے طور پر نوٹ کیا گیا۔ اس کے ساتھ ہی یہ بھی دیکھا گیا کلویرا کے ساتھ 86 فیصد مریضوں کی کووڈ۔ 19آرٹی پی سی آر جانچ پانچ دن میں منفی ہو گیا ہے اور سو فیصد مریض کے دسویں دن کووڈ آرٹی پی سی آر جانچ منفی دیکھا گیا ہے۔کووڈ مریض میں چوتھے دن سے کلینیکل بہتری دیکھی گئی۔

کلیویرا کے تجربہ سے ہونے والے فوائد بتاتے ہوئے اپیکس لیبارٹری کے بین لااقوامی کاروبار مینیجر مسٹر سی آرتھر پال نے کہا وہ اینٹی وائرل میڈیسن، وائرل لوڈ کرنا کم کرنے کے ساتھ ہی خون میں سفید خون ذرات، پلیٹلیٹ اور لیمفوسائٹس کو تیز ی سے بڑھاتی ہے لہذا ہر مرحلے میں مریض کی صحت میں تیز سے بہتری دیکھنی لگتی ہے۔ ای ایس آر (ایشائروسائٹ ریڈی مینٹیشن ریٹ)کی سطح اس بات کی ثبوت ہے وہ دوائی کے تجربہ سے اینٹی انفلیمٹری کا اثرات زیادہ ہورہے ہیں۔ کلویرا کوھ ینالجیسک، اینٹی پائریٹک اور تھامبروبایسوئی ٹو پنیا کو روکنے میں کارگر مانا گیا ہے۔ گردہ اور جگر کے مریض بھی اس کا استعمال دوسرے دواوں کے ساتھ محفوظ طریقے سے کر سکتے ہیں۔ کلویرا کا استعمال فرنٹ لائن ورکر اور کووڈ مریض کی دیکھ بھال کرنے کے والے ایسے ورکر بھی کرسکتے ہیں جو انفیکشن کے خطرے کے درمیان کام کرتے ہیں۔ وہ کلویرا کو اینٹیکونولسنٹ علاج (پروفیشلٹک) طور پر استعمال کر سکتے ہیں۔ دو سال سے زیاد ہ عمر سب لوگوں کے لئے کلویرا مکمل محفوظ ہے۔دوائی کے دستیابی کے بارے میں میں اپیکس لیبارٹری کے مارکیٹنگ چیف کارتک شنموگن نیبتایا کہ دوائی ملک بھر میں میں دستیاب ہے، کلیورا ایلوپیتھی طریقہ کار کے لئے نقصان دہ نہیں ہے بلکہ اس کا استعمال سے کورونا کے مریض جلد ٹھیک ہوں گے اور انفیکشن کے وجہ سے ملک میں بڑھاتے ہوئے سماجی، معاشی بوجھ کم جائے گا۔ہم نے دوائی قیمت بھی عام لوگوں کی پہنچ کے مطابق طے کیا ہے۔ اسے سماج کا ہر طبقہ خرید سکتا ہے۔ کلیورا کی ہر ٹیبلٹ صرف 11 روپے کھ ہوگا۔
واضح رہے کہ کلیویراکے تحفظ اور افادیت سے متعلق کے دوسرے مرحلے کا ٹسٹ چوہے پر اور تیسراے مرحلے کا ٹسٹ انسان پر کیا چلا گیا۔ کلویرا کو وائرل سے متعلق دوسرے بخار جس میں خون کا تھکہ جمنے کا خدشہ ہوتا ہے، استعمال کے لئے تصدیق کی گئی ہے۔

یہاں یہ بات پر نوٹ کرنا انتہائی ضروری ہے کہ صحت خدمات پر مریض کے بڑھتے ہوئے بوجھ کے درمیان اس طرح کے معاون علاج کو کیسے لاگو کیا جائے۔ اپیکس لیبارٹری کے عملدرآمد ڈائریکٹر سبھاشینی ونانگمودی نے بتایاکہ کوروناکے مطابق سلوک کی پیروی کرتے ہوئے معاون علاج کی مدد سے کووڈ کے مریض کو ہسپتال میں بھرتی کی ضرورت کو کم کیا سکتا ہے۔چنئی کی دواسازی کمپنی اپیکس لیبارٹری پرائیویٹ کے ذریعہ’کلیویرا‘ایک اینٹی وائرل ہربل فارمولیشن ٹسٹ کیا گیا ہے، کمپنی علاج و معالجہ کے میدان میں معروف تحقیق اوراختراعات کے لئے جانی جاتی ہے۔ابتدائی مرحلہ میں کلیویرا کو 2017 میں ڈینگی کے مریض کے علاج کے کے لئے تیار ہوا کیا گیا تھا۔گزشتہ سال جب ملک میں کورونا کے بڑھتے ہوئے ہوئے مریض کودیکھا،تو فارمولیشن دوبارہ کووڈ مریض کے معاون علاج کے طور پر کووڈ نشانات والے ہلکے سے میڈیم پر لگانے کے کے لئے تیار کیا چلا گیا یہ پروڈکٹ ملک بھر میں میں ہر جگہ دستیاب ہے اور 11 روپے فی ٹیبلٹ اس کی قیمت رکھی گئی ہے کلویرا کو بنانے کے لئے 100 لوگوں کے لئے پر کلینیکل جانچ کی گئی، مئی – جون 2020 میں میں کئے گئے ٹسٹ کے نتیجہ کافی مثبت دیکھے گئے۔کلیویرا کو اورلی دن میں دو بار کھانا کھانے کے بعد 14 دن تک لے سکتے ہیں۔ یہ کڈنی اور لیور کے لئے بھی محفوظ دوا مانی گئی ہے۔