۔ 5جون 2020: حکومت نے تین آرڈیننس جاری کیے۔۔ 14 ستمبر 2020: پارلیمنٹ میں زراعت کے تین بل پیش کیے گئے۔۔17 ستمبر 2020: لوک سبھا میں بل پاس ہوا۔۔ 20 ستمبر 2020: بل راجیہ سبھا میں منظور ہوا۔ ۔24 ستمبر 2020: پنجاب میں کسانوں نے تین روزہ ریل بند کرنے کا اعلان کیا۔۔ 25 ستمبر 2020: آل انڈیا کسان سنگھرش کوآرڈینیشن کمیٹی کی کال کے جواب میں ہندوستان بھر کے کسان احتجاج میں نکل آئے۔۔ 26 ستمبر 2020: شرومنی اکالی دل نے زرعی بلوں پر بی جے پی کے زیرقیادت قومی جمہوری اتحاد سے استعفیٰ دے دیا۔۔ 27 ستمبر 2020: زرعی بلوں کو صدر کی منظوری دی جاتی ہے اور گزٹ آف انڈیا میں مطلع کیا جاتا ہے اور زرعی قوانین بن جاتے ہیں۔۔ 25 نومبر 2020: پنجاب اور ہریانہ میں کسانوں کی یونینوں نے ‘دہلی چلو تحریک کی کال دی؛

دہلی پولیس نے کورونا پروٹوکول کی وجہ سے اجازت دینے سے انکار کردیا۔26 نومبر 2020: دہلی کی طرف مارچ کرنے والے کسانوں کو پانی کی بوچھار اور آنسو گیس کا سامنا کرنا پڑا۔ پولیس نے ہریانہ کے امبالا ضلع میں انہیں منتشر کرنے کی کوشش کی۔۔ 28 نومبر 2020: مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے کسانوں سے بات چیت کرنے کی پیشکش کی تاکہ وہ دہلی کی سرحدیں خالی کر دیں۔۔ 3 دسمبر 2020: حکومت نے کسانوں کے نمائندوں کے ساتھ بات چیت کا پہلا دور کیا، لیکن یہ ملاقات بے نتیجہ رہی۔۔ 5 دسمبر 2020: کسانوں اور مرکز کے درمیان بات چیت کا دوسرا دور بھی بے نتیجہ رہا۔۔ 8 دسمبر 2020: کسانوں نے بھارت بند کی کال دی۔ دوسری ریاستوں کے کسانوں نے بھی اس کال کی حمایت کی۔۔ 9 دسمبر 2020: کسان رہنماؤں نے مرکزی حکومت کی تین متنازعہ قوانین میں ترمیم کی تجویز کو مسترد کر دیا۔۔ 11 دسمبر 2020: بھارتیہ کسان یونین نے زرعی قوانین کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع کیا۔۔ 13 دسمبر 2020: مرکزی وزیر روی شنکر پرساد نے ٹکڑے ٹکڑے گینگ پر کسانوں کے احتجاج میں ملوث ہونے کا الزام لگایا۔۔ 30 دسمبر، 2020: حکومت اور کسان رہنماؤں کے درمیان مذاکرات کے چھٹے دور میں کچھ پیش رفت دکھائی گئی۔۔ 4 جنوری 2021: حکومت اور کسان رہنماؤں کے درمیان بات چیت کا ساتواں دور بھی بے نتیجہ رہا۔۔ 7 جنوری 2021: سپریم کورٹ نئے قوانین اور احتجاج کو چیلنج کرنے والی درخواستوں کی سماعت 11 جنوری کو کرنے پر راضی ہے۔۔ 11 جنوری 2021: سپریم کورٹ نے کسانوں کے احتجاج سے نمٹنے کے لیے مرکز کو پھٹکار لگائی۔

12 جنوری 2021: سپریم کورٹ نے زرعی قوانین پر عمل درآمد روک دیا۔ قوانین پر سفارشات دینے کے لیے چار رکنی کمیٹی تشکیل دے دی گئی۔۔ 26 جنوری 2021: یوم جمہوریہ کے موقع پر کسان یونینوں کی طرف سے بلائی گئی ٹریکٹر پریڈ کے دوران ہزاروں مظاہرین کی پولیس سے جھڑپ ہوئی۔ لال قلعہ میں املاک کو نقصان پہنچا۔۔ 29 جنوری 2021: حکومت نے زرعی قوانین کو ڈیڑھ سال کے لیے معطل کرنے کی تجویز دی اور قانون پر بحث کے لیے ایک مشترکہ کمیٹی تشکیل دی۔ کسانوں نے اس پیشکش کو ٹھکرا دیا۔۔ 5 فروری 2021: دہلی پولیس کے سائبر کرائم سیل نے کسانوں کے احتجاج پر ‘ٹول کٹ بنانے والوں کے خلاف ایف آئی آر درج کی ۔ 6 فروری 2021: احتجاج کرنے والے کسان دوپہر 12 بجے سے سہ پہر 3 بجے تک تین گھنٹے کے لیے ملک گیر ‘چکا جام کیا سڑک بلاک کی۔۔ 6 مارچ 2021: کسانوں نے دہلی کی سرحد پر 100 دن مکمل کر لیے۔۔ 8 مارچ 2021: سنگھو بارڈر احتجاج کے مقام کے قریب گولیاں چلائی گئیں۔ کوئی زخمی نہیں ہوا۔۔ 15 اپریل 2021: ہریانہ کے ڈپٹی سی ایم دشینت چیتالا نے وزیر اعظم نریندر مودی کو خط لکھ کر کسانوں کے ساتھ بات چیت دوبارہ شروع کرنے پر زور دیا۔ ۔ 27 مئی 2021: کسانوں نے چھ ماہ سے جاری احتجاج اور حکومت کے پتلے جلانے کے لیے ‘یوم سیاہ منایا۔

26 جون، 2021: کسانوں نے زرعی قوانین کے خلاف سات ماہ کے احتجاج کے موقع پر دہلی کی طرف مارچ کیا۔۔ 22 جولائی 2021: تقریباً 200 احتجاج کرنے والے کسان پارلیمنٹ ہاؤس کے قریب کسان ایوان کے متوازی "مانسون اجلاس” شروع کیا تھا۔۔ 7 اگست 2021: 14 اپوزیشن جماعتوں کے رہنماؤں نے پارلیمنٹ ہاؤس میں ملاقات کی اور دہلی کے جنتر منتر پر کسان ایوانمیں جانے کا فیصلہ کیا تھا۔۔ 5 ستمبر 2021: اتر پردیش کے انتخابات سے پہلے مہینوں بعد، کسان رہنماؤں نے مظفر نگر میں بی جے پی کی قیادت والی این ڈی اے کو چیلنج کرتے ہوئے زبردست طاقت کا مظاہرہ کیا۔۔ 22 اکتوبر 2021: سپریم کورٹ کا کہنا ہے کہ زیر التوا معاملات پر بھی احتجاج کرنا لوگوں کے حق کے خلاف نہیں ہے، لیکن یہ واضح کرتا ہے کہ ایسے مظاہرین عوامی سڑکوں کو غیر معینہ مدت تک نہیں روک سکتے۔۔ 29 اکتوبر 2021: دہلی پولیس نے غازی پور سرحد سے رکاوٹیں ہٹانا شروع کیں، جہاں کسان مرکز کے زرعی قوانین کے خلاف احتجاج کر رہے ہیں۔۔ 19 نومبر 2021: وزیر اعظم نریندر مودی نے زرعی قوانین کو منسوخ کرنے کا اعلان کیا۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔