زرعی قوانین کے خلاف گذشتہ چار ماہ سے کسانوں کی تحریک چل رہی ہے۔ اب غازی پور بارڈر پر ایک بار پھر کسانوں کو جٹانے کی کوشش میں راکیش ٹکیت پنچایت کر رہے ہے۔غازی پور کی سرحد سے تقریبا 60 کلومیٹر دور ، ہاپوڑ کے کسان ڈھول بجا کر جدوجہد تیز کرنے کا اعلان کر رہے ہیں۔ ملک بھر میں پنچایت چلانے والے راکیش ٹکیت دسمبر کے بعد پہلی بار ہاپوڑ پہنچے جب کسانوں نے چھوٹی چھوٹی گاڑی پر بیٹھ کر ان کا استقبال کیا۔ بھارتیہ کسان یونین (بی کے یو) کے رہنما راکیش ٹکیت نے اپنے خطاب میں کہا ، ‘اب میڈیا کو بھی خریدا جارہا ہے۔ خبریں فلٹر ہو رہی ہیں انہوں نے کہا کہ گجرات کے بعد اب اڈانی یہاں بھی آئیں گے کھیتی باڑی کریں گے۔ اب بیجوں کا قانون آئے گا۔ حکومت بتائے گی کہ کیا کرنا ہے 2021 آندولن کا سال ہے بی جے پی میں عوام کی نہیں بلکہ کمپنیوں کی حکومت ہے اسی وجہ سے حکومت بات کرنے سے قاصر ہے۔ تیجوریوں میں روٹی بند ہو جائے گی لہذا تحریک چلانی ہوگی۔


اپنی رائے یہاں لکھیں