روم :اٹلی میں پاکستان کی رہنے والی ایک لڑکی کے قتل کا معاملہ پھر سرخیوں میں ہے ۔ اس معاملے میں مردہ لڑکی کے رشتہ داروں کا کردار شک کے گھیرے میں ہے. اٹلی پولیس نے خاندان کے اراکین اور مقتول کے رشتہ داروں کا پتہ لگایا ہے. پولیس نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ نام نہا د آنر کلنگ میں 18 سالہ سمن عباس کے خاندان کے ارکان نے اسے گلا گھونٹ کر مار ڈالا اور اس کی لاش کوکھیت میں دفن کر دیا تھا۔ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق، سمن عباس 1 مئی 2021 سے غائب ہے.

سی سی سی ٹی وی کیمرے میں اسے آخری دفعہ ریزیو ایمیلیا سینٹرل اٹلی شہرکے قریب ایک کھیتمیں دیکھا گیا تھاجہاں اس کے والدشبرکام (46) کرتے تھے. پولیس کا کہنا ہے کہ شبرنے اٹلی سے فرار ہونے سے پہلے سمن کی والدہ نازیہ شاہین (47)، چاچاحسنین دانش (33) کزن نومانولہک اور اعجاز اکرام (28) کے ساتھ مل کر اس کا قتل کرنے اور لاش کھیت میں دفن کرنے کی سازش بنائی۔ پولیس کے مطابق، سمن نے پاکستان میں اپنے کزن سے شادی کرنے سے انکار کر دیا تھا، کیونکہ اس کا اٹلی میں ایک بوائے فرینڈ تھا اور وہ ‘مغربی’ طرز زندگی گزارنا چاہتی تھی جس کے بعد رشتہ دار وںنے اس کا قتل کرنے کی سازش بنائی ۔

ایک کزن اعجاز کو فرانس میں گرفتار کیا گیا ہے، جس کو اٹلی کے حوالے کردیا گیا ہے۔وہیں سمن کے والدین شبر اور نازیہ پاکستان میں ہیں. انہوں نے اپنی بیٹی کے قتل سے انکارکردیا ہے. پراسیکیوٹر کا کہنا ہے کہ حسنین کے قتل کا ماسٹر مائینڈ ہے اور نومانولہک ابھی تک فرار ہے. پراسیکیوٹرکو بھیان پانچوں پر سمن کو مارنے اورلاش کو ٹھکانے لگانے کا شکست ہے ۔لیکن ابھی تک کوئی ثبوت نہیں ملاہے.

وہ کہتے ہیں کہ یہ معاملہ گزشتہ سال موسم سرما کا ہے ۔ جب سمن کے خاندان کے ممبران نے پاکستان میں اس کے کزن سے رینج میریج کرنے کے لئے مجبور کر رہے تھے ۔اس کے بعدسمن گھر سے فرار ہوگئی تھی اور اپنے خاندان کے خوف سے اکتوبر سے سماجی فلاح و بہبود کے لئے چلنے والے پناہ گزین کیمپ میں رہ رہے تھی.رپورٹ کے مطابق، خبروں کو 11 اپریل، 2021 کو اپنے گھر شناختی کارڈ لینے کے لئے واپس آ ئی تھی،

یہ واضح نہیں ہے کہ اسے ضرورت کیوں تھی پولیس کا خیال ہے کہ 26 اپریل تک، سمن کے خاندان کے ارکان نے اس کے قتل کے لئے تیاری شروع کردی تھی پراسیکیوٹر کا کہنا ہے کہ یہ وہی تاریخ ہے جس دن سمن کے چچا ہسنین نے اس کے والدین کے لئے پاکستان واپس جانے کے لئے ایئر ٹکٹ خریدا تھا. 29 اپریل کی شام کو سی سی ٹی وی کیمرے میں تین لوگوں کو دیکھا گیا تھا. پولیس کا کہنا ہے کہ یہ حسنین، نومانولہک اور اعجاز تھے جو ا س دن شام کولگ بھگ 7.30 بجے کھیت کے پیچھے گھومتے ہوئے نظر آئے تھے تینوں کے پاس دوپھاوڑے ایک بالٹی اور ایک نیلے رنگ کا بیگ اور ایک لوہے کا ڈنڈا تھا.