کرناٹک میں ایک بار پھر پاکستان کی حمایت میں نعرہ

کُنداپور :کرناٹک میں ایک بار پھر پاکستان کی حمایت میں نعرہ سننے کو ملا ہے۔ آج ریاست کے ساحلی شہر کُنداپور میں پاکستان زندہ آباد کا نعرہ لگانے والے ایک شخص کو پولیس نے گرفتارکیا ہے۔ گرفتار شخص کی پہچان راگھویندر کے طور پر کی گئی ہے۔ آج صبح تقریبا 10بجے راگھویندرنامی شخص کُنداپور کی منی ودھان سودھا میں داخل ہوا اور اچانک پاکستان زندہ آباد کے نعرے لگانے لگا۔ بار بارنعرے لگاتا ہوا دیکھ کرمقامی لوگوں نے موبائل میں اس شخص کی حرکت کو قید کر لیا۔

جیسے ہی پولیس کو اطلاع ملی فوری طور پر اس شخص کو حراست میں لیا گیا۔ راگھویندر کو جب پولیس نے حراست میں لیا تب بھی وہ بار بار پاکستان زندہ آباد کے نعرے لگاتا رہا۔ مقامی لوگوں کے علاوہ کُنداپور کے تحصیلدار نے بھی اس شخص کے خلاف پولیس میں تحریری شکایت درج کروائی۔ ابتدائی جانچ کے بعد پولیس نے راگھویندر کے خلاف ملک سے غداری کا مقدمہ درج کرلیا ہے۔ اُڈپی ضلع پولیس معاملے کی مزید جانچ کررہی ہے۔

دوسری جانب یہ بات بھی کہی جا رہی ہے کہ پاکستان زندہ آباد کے نعرے لگانے والا یہ شخص ذہنی طور پربیمار ہے۔ 8سال قبل ٹیچر کے طور پر خدمات انجام دے رہا تھا لیکن ذہنی پریشانی میں مبتلا ہونے کی وجہ سے اسے اسکول سے برطرف کر دیا گیا۔ راگھویندر گانیگ نامی اس شخص کا تعلق کُنداپور کے کوڈی مقام سے ہے۔

اُڈپی ضلع کے اے سی پی کمارچندر نے کہا کہ ہم اس شخص کی دماغی حالت کے سلسلے میں کچھ نہیں کہہ سکتے۔ میڈیکل رپورٹ آنے کے بعد مزید معلومات فراہم کرینگے۔ کنداپور پولیس اسٹیشن میں راگھویندر کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔ ملک سے غداری کا کیس درج ہواہے۔ واضح رہے کہ کرناٹک میں حالیہ دنوں میں پاکستان کی حمایت میں نعرے لگانے کا یہ تیسرا واقعہ ہے۔