• 425
    Shares

کہتے ہیں کہ کچھ کرنے کا جذبہ اور لگن ہو تو زندگی میں کیے جانے والے مشکل فیصلے بھی بہترین ثابت ہو جاتے ہیں اور اس جملے کی واضح مثال تین دوستوں کی منفرد کہانی ہے۔

میڈیا پر ریاست مدھیہ پردیش کے اندور شہر سے تعلق رکھنے والے 3 دوستوں کی کہانی شیئر کی گئی ہے جنہوں نے آج سے 5 سال قبل سرکاری ملازم بننے کے بجائے چائے کا اسٹال کھولنے کا فیصلہ کیا۔میڈیا رپورٹس کے مطابق تینوں دوستوں نے ملازمت ڈھونڈنے کے بجائے’ چائے سُٹا بار‘ کے نام سے ایک اسٹال کھولا اور چند ہی برسوں میں کروڑ پتی بن گئے۔

خوش قسمت دوست آج 100کروڑ سے زائد روپے کے اثاثوں کے مالک ہیں اور صرف 5 سال کے عرصے میں ان کی دبئی ، عمان اور اسپین سمیت بھارت بھر میں 165 شاخیں قائم ہو گئی ہیں۔اگرچہ ان دوستوں کے اسٹال کا چائے سُٹا بار ہے لیکن حیرت انگیز بات یہ ہے کہ اس اسٹال پر آنے والے گاہکوں کو سگریٹ پینے کی اجازت نہیں ہے۔

چائے سُٹا بار عام چائے کے ڈھابوں سے قدرے مختلف ہے کیوں کہ یہاں صرف 10 روپے میں مختلف فلیور کی چائے دستیاب ہے، یہی نہیں اسٹال پر چائے کے علاوہ سینڈوچ، میگی اور پاستا بھی دستیاب ہوتا ہے۔اس اسٹال کی ایک اور خاص بات یہ بھی ہے کہ یہاں چائے مٹی کے کپوں اور کلہاڑ میں پیش کی جاتی ہے۔

رپورٹ کے مطابق تینوں دوستوں نے 2016 میں اپنا پہلا چائے کا اسٹال 3 لاکھ روپے میں کھولا تھا تاہم اب یہ ایک پرائیویٹ لمیٹڈ کمپنی میں تبدیل ہو چکا ہے جس کی دنیا کے دوسرے ممالک میں بھی شاخیں کھل گئی ہیں۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔