مظفرنگر: ضلع مظفرنگر کے قصبہ پورقاضی دو نجی اسکولوں کے مینیجروں پر 17 لڑکیوں کو مبینہ طور پر نشیلی چیز کھلا کر جنسی ہراسانی کا نشانہ بنانے اور آبروریزی کی کوشش کرنے کا الزام عائد ہوا ہے۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق پولیس نے اس معاملہ میں دونوں ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کر لیا ہے۔ اسی کے ساتھ لاپروائی برتنے کی وجہ سے ایک پولیس عہدیدار کو لائن حاضر کر دیا گیا ہے۔

مظفرنگر ضلع کے سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس ابھیشیک یادو نے پیر کے روز بتایا کہ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے لیڈر اور مقامی رکن اسمبلی پرمود اوٹوال کی مداخلت کے بعد اہل خانہ کی شکات کی بنا پر مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ پورقاضی پولیس تھانہ کے انچارج ونود کمار سنگھ کو اس معاملہ میں لاپروائی برتنے کی وجہ سے لائن حاضر کر دیا گیا ہے۔ وہیں، بھوپہ تھانہ میں واقع سوریہ دیو پبلک اسکول کے مینیجر یوگیش کمار چوہان اور پورقاضی علاقہ میں واقع جی جی ایس انٹرنیشنل اسکول کے مینیجر ارجن سنگھ کے خلاف جنسی ہراسانی، نشیلی چیز دینے اور پوکسو ایکٹ کی دفعات میں رپورٹ درج کی گئی ہے۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔