نئی دہلی : سپریم کورٹ نے چہارشنبہ کو وزیراعظم نریندر مودی کے بیان کا حوالہ دیا کہ یوم جمہوریہ پر دہلی میں پیش آئے تشدد کے معاملہ میں قانون اپنا کام کرے گا، اور فاضل عدالت کے مقررہ پینل کی جانب سے وقت مقررہ میں تحقیقات کیلئے داخل کردہ عرضیوں کو سماعت کیلئے قبول کرنے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ اس مرحلہ پر عدالت کوئی مداخلت کرنا نہیں چاہتی۔ ایک ایڈوکیٹ کے داخل کردہ عرضی میں استدعا کی گئی تھی کہ سپریم کورٹ کے سابق جج کی صدارت میں تین رکنی انکوائری کمیشن تشکیل دیا جائے ۔ اس میں دو ریٹائرڈ ہائیکورٹ ججس شامل کئے جائیں۔ یہ کمیشن ثبوت اکھٹا کرے گا اور بیانات قلمبند کرتے ہوئے 26 جنوری کو دہلی میں ٹریکٹر ریالی کے دوران پیش آئے تشدد پر رپورٹ پیش کرے گا۔ تاہم چیف جسٹس ایس اے بوبڈے کی بنچ نے کہا کہ اس ضمن میں مرکزی حکومت سے رجوع ہوں اور عرضی واپس لے لیں۔


اپنی رائے یہاں لکھیں