ممبئی ۔ یو پی شیعہ وقف بورڈ کے صدر نشین وسیم رضوی کی جانب سے سپریم کورٹ میں قرآن کریم کی 26 آیتوں کو حذف کرنے سے متعلق مفاد عامہ کی عرضی کی مخالفت کرتے ہوئے بی جے پی اقلیتی مورچہ کے قومی صدر جمال صدیقی نے اسے بے معنی اور اصل مسئلہ سے توجہ ہٹانے کی ایک ناکام کوشش قرار دیا۔آج یہاں وسیم رضوی کی جانب سے داخل کردہ عرضی پر اپنے تاثرات کا اظہار کرتے ہوئے جمال صدیقی نے کہا کہ اس کے خلاف سی بی آئی نے وقف کی جائیدادوں میں کروڑوں روپئے کے اسکام کے معاملے میں ایف آئی آر درج کی ہے، اس سے توجہ ہٹانے کیلئے اس نے یہ اوچھی اور قابل مذمت حرکت کی ہے۔ جمال صدیقی نے اس موقع پر یہ بھی وضاحت کی کہ وسیم رضوی بی جے پی کا نہ تو رکن ہے اور نہ ہی پارٹی سے کوئی تعلق ہے۔


اپنی رائے یہاں لکھیں