واٹس ایپ پر لوگوں کا اعتماد بحال ہوا ہی نہ تھا کہ اب اس پر مبینہ طور پر ویب صارفین کا ڈیٹا گوگل سرچ میں شامل کیے جانے کا بھی الزم عائد ہوگیا ہے۔

میڈیا کی رپورٹ کے مطابق کچھ عرصے قبل واٹس ایپ چیٹ گروپس کے گوگل سرچ انجن پر نمودار ہونے کی شکایات سامنے آئی تھیں جس کے مطابق کوئی بھی ان گروپس کو جوائن کر سکتا ہے۔

تاہم اب اطلاعات سامنے آئی ہیں کہ میسجنگ ایپ کے ایسے صارفین جو اسے ویب براؤزرز کی مدد سے استعمال کرتے ہیں، ان کے نمبرز بھی گوگل سرچ انجن میں دکھائی دے رہے ہیں۔ ایک سیکیورٹی ریسرچر نے شبہ ظاہر کیا کہ یہ نمبرز ممکنہ طور پر واٹس ایپ کے ویب ورژن سے لیک ہوئے ہیں۔

انھوں نے بتایا کہ واٹس ایپ کے یہ نمبرز اب گوگل سرچ انجن میں شامل کیے جارہے ہیں۔

تاہم انھوں نے اس چیز کی بھی وضاحت کی کہ یہ نمبرز انفرادی صارفین کے ہیں، ان میں بزنس نمبرز شامل نہیں ہیں۔