وارانسی میں ایک طرف کورونا انفیکشن خطرناک رفتار سے بڑھ رہا ہے اور لوگوں کو ڈرا رہا ہے۔ دوسری طرف اب کورونا پازیٹو مریضوں کی موت کے بعد ان کی آخری رسومات میں مشکلیں کھڑی ہو گئی ہیں۔ دراصل کورونا متاثرہ مریض کی موت کے بعد جس سی این جی کریمیٹوریم میں اس کی آخری رسومات ادا ہوتی ہے، اس کی دونوں مشینیں خراب ہو گئی ہیں۔ اس کے سبب لاشوں کی آخری رسومات کی ویٹنگ 10 گھنٹے تک پہنچ گئی ہے۔ ہریش چندر گھاٹ پر لکڑی کی چِتا پر عام اموات والے لوگوں کی آخری رسومات ادا ہوتی ہیں۔ قدرتی گیس کریمیٹوریم پر کورونا سے مرنے والوں کی آخری رسومات ادا کی جاتی ہے۔

ایمبولنس کی لمبی قطار لگنے کے بعد فی الحال نگر نگم انتظامیہ نے متبادل کے طور پر لکڑی کی چِتاؤں پر آخری رسومات ادا کرنے کی اجازت دی ہے۔ دوسری طرف ٹیکنیشین لگاتار مشین ٹھیک کرنے کا کام کر رہے ہیں۔ مانا جا رہا ہے کہ مشین ٹھیک ہونے میں تین دن کا وقت لگے گا۔ نگر نگم کے انجینئر اجے رام کے مطابق کافی دیر تک مشینوں کا تجزیہ کرنے کے بعد یہ صاف ہوا کہ ایک مشین کا بوائلر پوری طرح سے پگھل گیا ہے۔ دوسری مشین کے بوائلر کا پنکھا ابھی ٹھیک ہے۔ جس مشین کا پنکھا ٹھیک ہے اس کے کچھ تار خراب ہو گئے ہیں۔ امید ہے کہ جمعرات دیر شام تک درست کر لیا جائے گا۔ یعنی ایک مشین ٹھیک ہونے پر کچھ راحت مل سکتی ہے۔ لیکن فی الحال دونوں مشینیں خراب ہونے کی وجہ سے دقتیں بڑھ گئی ہیں۔