ناندیڑ:14نومبر ۔ (ورق تازہ نیوز) اتوارہ پولس اسٹیشن حدود کے برکت کامپلکس علاقہ میں پولس پر حملے کے سلسلے میں کل 40 کے قریب ملزمین کو گرفتار کیا گیا ہے اور ناندیڑ شہر کے چار دیگر پولس اسٹیشنوں میں بھی مقدمات درج کئے گئے ہیں۔

اس ضمن میں ملزمین کی تلاش کےلئے دستے تشکیل دئے گئے ہیں ۔آج اتوارکو نیلیش مورے ڈی واے ایس پی نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے بتایا کہ سوشل نیٹ ورکنگ سائٹ پر کڑی نظر رکھی جارہی ہے تاکہ کوئی بھی پوسٹ ایسی نہ ہو جس سے ماحول خراب ہوسکے۔

انھوں نے نوجوانوںکو نصیحت کی کہ وہ سماج سماج مخالف سرگرمیوں میں ملوث ہونے سے باز رہیں ورنہ اس کا اثر ان کے مستقبل پر پڑے گا۔

تریپورہ میں واقعہ کے خلاف 12 نومبر نہ صرف ناندیڑ میں بلکہ ریاست کے کئی مقامات پربند منایاگیاجس کے بعد پُرتشدد واقعات رونما ہوئے اورپھر اسکے جواب میں کچھ افراد نے دوسرے دن 13 نومبر کو بھی احتجاج کیا ۔ناندیڑ شہر کے وزیر آباد، اتوارہ ، شیواجی نگر اور ناندیڑ دیہی پولیس اسٹیشنوں میں 12 نومبر کو پیش آنے والے مختلف واقعات کے لیے چار الگ الگ مقدمات درج کیے گئے ہیں۔

قانون کے نقطہ نظر سے سب سے بڑا واقعہ اتوارہ پولیس اسٹیشن حدود میں پیش آیا۔ جس میں ایڈیشنل سپرنٹنڈنٹ آف پولس نیلیش مورے، پی آئی صاحب راو نراڑے سمیت کچھ پولس ملازمین زخمی ہوئے تھے۔

نیلیش مورے نے کہا کہ فیس بک، انسٹاگرام، ٹویٹر، واٹس ایپ جیسے کسی بھی عوامی میڈیا پر پوسٹ کرتے وقت احتیاط سے سوچیں کیونکہ ناندیڑ سائبر پولیس برانچ اس پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔

تمام واٹس ایپ گروپس کو کو بھی مطلع کر دیا گیا ہے۔ اس لیے مذہبی موضوعات پر کوئی ایسی پوسٹ نہ کریں جس سے تشدد میں اضافہ ہو۔

جہاں تک آپ جانتے ہیں، پولیس معاشرے میں امن قائم کرنے کے لیے سخت محنت کر رہی ہے۔ تمام پولیس اپنی جان کو خطرے کے باوجود کام کر رہی ہے۔ مجموعی صورتحال کو افسوسناک قرار دیتے ہوئے نیلیش مورے نے امید ظاہر کی کہ ناندیڑ ضلع پولیس فورس معاشرے میں امن قائم کرے گی۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔