ناندیڑ:یکم جولائی سے سنگل یوز پلاسٹک کے استعمال پر پابندی

ناندیڑ:25مئی (ورقِ تازہ نیوز) سنگل یوز پلاسٹک کا استعمال ماحول کے لیے ایک بڑا خطرہ ہے۔ان میں سجاوٹ کے لیے خصوصی طور پر استعمال ہونے والا پلاسٹک اور تھرماکول، مٹھائی کے باکس، دعوتی کارڈ، سگریٹ پیک پر بطور کور استعمال ہونے والا پلاسٹک، پلاسٹک کی بالیاں، پلاسٹک کی چھڑی، پلاسٹک کے جھنڈے، کینڈی، آئس کریم کاڑیاں، پلاسٹک پلیٹس، کپ گلاسس و دیگر اشیاءشامل ہیں۔ ان تمام اشیاءپر یکم جولائی 2022ءسے پابندی عائد کردی گئی ہے اور انہیں فروخت کرنے والوں پر سخت کارروائی کرنے کے احکامات ضلع کلکٹر ڈاکٹر وپن اٹنکر نے دیئے ہیں۔

واحد استعمال کی پلاسٹک کی اشیاءکے بجائے دیگر کئی قدرتی ذرائع موجود ہیں۔ اس میں خاص طور پر کپڑے کی تھیلی، بابو، لکڑی کی اشیائ، سیرامکس کے پلیٹیں، پیالے وغیرہ اچھے ذرائع ہیں۔ شہریان کو اس طرح کے قدرتی ذرائع کا استعمال کرنے کی اپیل ڈاکٹر وپن اٹنکر نے کی ہے۔مہاراشٹر پلاسٹک اور تھرماکول نوٹیفکیشن 2018ءکے مطابق پانچ سو روپئے فوری طور پر جرمانہ، تنظیمی سطح پر پانچ ہزار روپئے تک جرمانہ عائد کیا جائے گا۔ دوسری بار استعمال کرنے پر دس ہزار روپئے جرمانہ عائد کیا جائے گا اور تیسری بار ایسی ہمت کرنے پر اُن کے خلاف 25 ہزار روپئے جرمانہ اور تین ماہ قید کی ہوگی۔

کلکٹر آفس میں منعقدہ ٹاسک فورس کی میٹنگ ضلع کلکٹر ڈاکٹر وپن اٹنکرکی صدارت میں منعقد کی گئی۔ اس موقع پر ضلع پریشد کے ایڈیشنل چیف ایگزیکٹیو آفیسر سنجے تُکابلے، ایجوکیشن آفیسر پرشانت دگرسکر، ضلع پلاننگ آفیسر وِکاس وکاس آڑے، میونسپل کارپوریشن کے کمشنر نلیش سکیوار، مہاراشٹر انڈسٹریل ڈیولپمنٹ کارپوریشن کے ایگزیکٹیو انجینئر ٹیمبھرنیکر، مہاراشٹر آلودگی کنٹرول بورڈ کے سب ریجنل آفیسر راجیندر پاٹل، ریجنل آفیسر پنکج باﺅنے، مہیش چاﺅلے، گروپ ڈیولپمنٹ آفیسر و دیگر موجود تھے۔