ناندیڑمیں ہندوتنظیموں کے جن آکروش مورچہ کے دوران دوکان پر سنگباری : ویڈیو دیکھیں

2,004

ناندیڑ:29نومبر ( ورقِ تازہ نیوز)ناندیڑمیں مختلف ہندوتنظیموں کی جانب سے ہندو ﺅں پر ہونے و الے مظالم اور لوجہاد کے معاملے پر شہر میں آج بروز منگل کو دوپہر کے وقت قدیم شہر تا ضلع کلکٹر آفس تک جن آکروش مورچہ نکالاگیا جس میں بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔ اسی دوران جب مورچہ قدیم مونڈھا سے گزرہا تھا شرپسندوں نے یہاں پر موجود سلیم سوداگر کی فرینڈس زردہ اسٹور کے سائن بورڈ پر سنگباری کی جس میں یہ بورڈ ٹوٹ گیا ۔

جس کی وجہہ سے کچھ دیر کیلئے قدیم مونڈھا میں کشیدگی کاماحو ل تھا ۔ریان سوداگر نے بتایا کہ اس سنگباری میں دوکان کو تقریبا دس ہزار روپیوں کانقصان ہوا ہے ۔یہ جلوس آج منگل کو قدیم شہر کے بھوجالال گاولی چوک صرافہ سے دوپہر ایک بجے کے بعد شروع ہواا ور برقی چوک‘ قدیم مونڈھا ‘ و زیر آباد چوک سے گزرتے ہوئے ضلع کلکٹرآفس پہنچا ۔

اس مورچہ کے پیش نظر آج قدیم شہر میںصبح سے ہی پولس کے سخت ترین بندوبست رکھے گئے تھے۔ ہر جگہ پر فکس پوائنٹ لگائے گئے تھے اور حالات پرباریک بینی سے نظر رکھنے کیلئے اونچے مقامات پر دوربین سے لیس پولس ملازمین کو بھی تعینات کیاگیاتھا ۔

ناندیڑکے ایس پی کرشناکوکاٹے اپنی ٹیم کے ہمراہ یہاں خیمہ زن تھے۔ اسکے علاوہ دیگر افسران بھی بھاری جمعیت کے ساتھ تھے ۔صرافہ تا حبیب ٹاکیز کارنر تک مورچہ کو جلدی آگے بڑھایاگیا ۔

اس مورچہ میں رکن پارلیمنٹ پرتاپ پاٹل چکھلی کر ‘ راجیش پوار ایم ایل اے ‘ پروین سالے دگمبرشیوچاریہ مہاراج ‘ مادھوپاوڑے ‘ دلیپ سنگھ سوڈی ‘ دیپک سنہہ راوت نے شرکت کی۔

مورچہ میں مذہبی نعروں کے علاوہ جوشیلے نعرہ بھی لگائے جارہے تھے۔کلکٹر آفس پہنچنے کے بعد ایک نمائندہ وفد نے صد رجمہوریہ ہند کو میمورنڈم روانہ کیا جوسکل ہندوسماج ناندیڑضلع کے نام سے تھا ۔حکومت سے مطالبہ کیاگیا کہ وہ ہندوﺅں پرہورہے مظالم اور خاطیوں کوگرفتار کرکے جلد سے جلد سزا دی جائے ۔