ناندیڑمیں کورونا قوانین کی دھجیاں اڑائی جارہی ہیں‘ کلکٹر اور ایس پی توجہ دیں

0 1

ناندیڑ: 11 جنوری۔ (ورق تازہ نیوز) ریاستی حکومت نے مہاراشٹر میں کورونا کے بڑھتے ہوئے معاملات پر قابو پانے کیلئے کچھ سخت قوانین نافذ کئے ہیں. لیکن ناندیڑضلع میں ان قوانین کی دھجیاں اڑائی جارہی ہیں اوریہ تمام قوانین برائے نام نظر آرہے ہیں ۔

دن کے وقت بازاروں اوردیگر مقامات پر ہجوم پرقابو پانے کیلئے حکم امتناعی احکامات نافذ کئے گئے ہیں جس کامطلب یہ ہے کہ ایک مقام پرپانچ سے زائد افراد جمع نہ ہو اس کے علاوہ شادی بیاہ تقریب‘ سماجی ‘سیاسی ‘مذہبی پروگراموں میں پچاس افراد کی شرکت کی اجازت دی گئی ہے ۔

مگرناندیڑمیں فی الحال ان تمام قوانین کوبالائے طاق پر رکھ کرتمام تقاریب و پروگرام پورے جوش و خروش کے ساتھ منعقد کئے جارہے ہیں۔

جسکا نتیجہ آئندہ چند دنوں میں عوام کودیکھنے کو ملا جب ناندیڑ میں کورونا کیسیزیومیہ پانچ سو تاایک ہزار تک ریکارڈ ہوں گے ۔ضلع کلکٹر اورمیونسپل کارپوریشن کے کمشنر بھی کورونا قوانین پر سختی سے عمل آوری کرنے کیلئے کوشاں نظر نہیں آرہے ہیں

۔عوام ماسک کا استعمال بھی بالکل کم کررہے ہیں۔کارپوریشن کی جانب سے کوئی جرمانہ کی کاروائی نہیں کی جارہی ہے ۔اسلئے عوام بے فکر ہوکر بغیر ماسک کے گھوم پھیررہے ہیں۔اس کے علاوہ نائیٹ کرفیو رات میں گیارہ بجے سے صبح پانچ بجے تک نافذ کیاگیاہے مگر اس پر بھی پولس انتظامیہ کی جانب سے کوئی سختی سے عمل آوری نہیں ہورہی ہے ۔

رات کے وقت بھی سڑکوں اور مختلف چوراہوں پر لوگوں کاہجوم ہے اور کاروبار بھی چل رہے ہیں۔ ناندیڑ ضلع میں یومیہ سو سے زائد کورونا کے کیسیز مل رہے ہیں اور آئندہ دو دنوں میں یہ تعداد دوگنی ہوسکتی ہے۔ آج 170 نئے پازیٹیو مریض ملے ہیں اور سب سے زیادہ مریض ناندیڑ شہر میں پائے گئے ہیں۔

ناندیڑ میں کورونا کی تیسری لہر آچکی ہے اور سبھی تعلقوں میں اب مریض مل رہے ہیں ۔طبی ماہرین نے اشارہ دیا کہ جنوری کے آخرا ور فروری کے دو ہفتوں تک کوروناکی وباءعروج پررہے گی۔اور مہاراشٹرمیں ایک لاکھ سے زائد کیسیز مل سکتے ہیں ۔

اسلئے ناندیڑ میںبھی روزانہ ایک تادو ہزار کیسیزآسکتے ہیں اورناندیڑ میں فی الحال جو صورتحال ہے وہ ان کورونا کیسیز میں اضافہ کاباعث بن سکتے ہیں۔اس لئے ضلع کلکٹر کو اس جانب خصوصی توجہ دینے کی ضرورت ہے اور کورونا قوانین پر عمل آوری کیلئے سخت اقداما ت اٹھانے کی ضرورت ہے۔