• 425
    Shares

ناندیڑ:28اگست۔ (ورق تازہ نیوز)سال 2017 کے میونسپل کارپوریشن انتخابات میں کانگریس پارٹی نے عوام کو شہر کی ترقی کے خواب دکھائے تھے ۔اورعوام نے کانگریس کو90فیصدووٹ دے کر کامیاب بھی بنایا لیکن گزشتہ چارسالوں کے درمیان شہر کی حالت کافی ابتر ہوگئی ہے۔کوئی اہم ترقیاتی کام انجام نہیں دئےے گئے اور نہ سڑکوں کی تعمیر ہوئی ہے۔ایسے حالات میں شہریان پر 140کروڑ رپیوں کاجائیداد ٹیکس بقایا ہے ۔

جس کی عدم وصولی سے بھی شہر کے ترقیاتی کام متاثر ہوئے ہیں۔ریاست کے وزیر اشوک راوچوہان نے سال 2017 ءکے ناندیڑبلدیہ انتخابات میں ریاست میں بی جے پی کااقتدارہونے کے باوجود کانگریس پارٹی کوزبردست کامیابی سے ہمکنار کیا۔اسکے بعدریاست میں سال 2019 میں اقتدار میں تبدیلی آئی اورکہاجارہاتھا کہ ناندیڑشہر کی ترقی کی راہ ہموار ہوگئی ہے لیکن تقریباتین سال کاعرصہ گزرہا ہے شہر میں کوئی اہم ترقیاتی کام نہیں ہوئے ۔

بالخصوص سڑکوں کی حالت انتہائی خستہ بنی ہوئی ہے ۔جس سے حادثات بڑھ گئے ہیں۔شہر کی کئی بستیوں میںعوام بنیادی سہولیات سے محروم ہیں۔ ناندیڑکارپوریشن کی تجوری بھی خالی ہے ۔ٹیکس کی رقم ہی کارپوریشن کی آمدنی کابڑا ذریعہ ہوتا ہے لیکن ہرسال کروڑوں روپے بقایارہے جاتے ہیں اورآج یہ رقم 140کروڑ تک پہنچ گئی ہے شہر میں کھلی جگہوںکاٹیکس وصو ل کیاجائے تو کارپوریشن کوکروڑوں کی آمدنی ہوگی ۔

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔