• 425
    Shares

مرکزی وزیر نارائن رانے کے خلاف ایک طرف شیوسینا لیڈروں کی ناراضگی عروج پر ہے، اور دوسری طرف وشو ہندو سینا کے ایک لیڈر نے ان کا سر قلم کرنے والے کو 51 لاکھ روپے انعام دینے کا اعلان کر کے ہلچل مچا دی ہے۔ وشو ہندو سینا سربراہ ارون پاٹھک نے سوشل میڈیا پر یہ متنازعہ اعلان کیا ہے اور کہا ہے کہ بالا صاحب ٹھاکرے کے بیٹے ادھو ٹھاکرے پر نارائن رانے نے جو حملہ کیا ہے وہ ناقابل قبول ہے۔
دلچسپ بات یہ ہے کہ وارانسی میں وزیر اعظم اور وزیر اعلیٰ کے پوسٹر چپکانے کے معاملے میں مبینہ طور پر تین مہینے سے فرار چل رہے پاٹھک کو پولیس ابھی تک گرفتار نہیں کر پائی ہے، لیکن اس نے فیس بک اور ٹوئٹر پر مرکزی وزیر نارائن رانے کا سر قلم کرنے والے کو 51 لاکھ روپے انعام دینے کا برسرعام اعلان کر دیا ہے۔ پاٹھک کی تلاش بھیلوپور تھانہ میں درج ایک معاملے کو لے کر ہے، لیکن وہ اب تک پولیس کی گرفت سے دور ہے۔

ارون پاٹھک نے سوشل میڈیا پر واضح لفظوں میں لکھا ہے کہ ’’مرکزی وزیر نارائن رانے کا سر قلم کرنے والے کو 51 لاکھ‘‘، ساتھ ہی انھوں نے یہ ٹوئٹ بھی کیا ہے کہ ’’میں تجھ سے وعدہ کرتا ہوں احسان فراموش نارائن رانے کہ تیرے مرنے کے بعد تیری ہڈیوں کو کاشی میں بہانے نہیں دوں گا، اور تیری روح صدیوں تک بھٹکتی رہے گی۔‘‘ ایک دیگر ٹوئٹ میں پاٹھک نے لکھا ہے کہ ’’جس پاکیٹ مار کو بالا صاحب نے شیو سینک بنائے، اسے وزیر اعلیٰ بھی بنایا، اس نے گھٹیا کام کیا، سستی شہرت حاصل کرنے کے لیے رانے نے بالا صاحب کے بیٹے پر حملہ کیا۔ ایسے آدمی کا سر قلم کرنا چاہیے، اور جو یہ کرے گا اسے میں 51 لاکھ انعام دوں گا۔‘‘

ورق تازہ نیوز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں  https://t.me/waraquetazaonlineاور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔