نئے وزیر اعظم کے انتخاب میں شہباز شریف اور شاہ محمود قریشی آمنے سامنے

عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی کامیابی کے بعد نئے قائد ایوان یعنی وزیر اعظم کے انتخاب کے لیے کاغذات نامزدگی کی کارروائی شروع ہوچکی ہے۔ متحدہ اپوزیشن کی طرف سے شہباز شریف جبکہ پی ٹی آئی کی جانب سے شاہ محمود قریشی کو امیدوار نامزد کیا گیا ہے۔ ملک کے نئے وزیراعظم کا انتخاب پیر کو ہوگا۔

گیارہ اپریل کو ملک کے23ویں وزیراعظم کا انتخاب ہوگا
پاکستان کی قومی اسمبلی میں وزیراعظم عمران خان کے خلاف پیش کی گئی تحریک عدم اعتماد 174 ووٹوں کے ساتھ کامیاب ہوگئی ہے اور وہ اب وزیراعظم پاکستان نہیں رہے ہیںسپیکر اسد قیصر نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دیا اور اجلاس کی صدارت ایاز صادق نے کی.

سپریم کورٹ کے پانچ رکنی بینچ نے متفقہ طور پر ڈپٹی سپیکر کی جانب سے وزیراعظم عمران خان کے خلاف تحریک اعتماد کو مسترد کرنے کے فیصلے کو غیر آئینی قرار دیا تھا
سپریم کورٹ نے حکم دیا تھا کہ وفاقی حکومت کسی بھی رکنِ قومی اسمبلی کو عدم اعتماد کی تحریک میں ووٹ ڈالنے سے کسی بھی انداز میں نہ روکے اور نہ ہی کسی قسم کی مداخلت کرے
ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل بابر افتخار نے کہا ہے کہ تین اپریل کو قومی اسمبلی میں جو کچھ ہوا اس میں فوج کی رضامندی نہیں تھی اور اس کا فوج سے کوئی تعلق نہیں
پنجاب اسمبلی میں وزیراعلیٰ کے انتخاب کے لیے بلایا جانے والا اجلاس ووٹنگ کے بغیر 16 اپریل تک کے لیے ملتوی کیا گیا تاہم اپوزیشن نے ایک علامتی اجلاس میں حمزہ شہباز کو وزیر اعلیٰ منتخب کیا.